سندھ حکومت اور پولیس کی چپقلش ٗ شہر میں لوٹ مار کی وارداتیں یومیہ 180سے بڑھ گئیں

September 12, 2017 2:05 pmViews: 2

ماہ اگست کے دوران 5ہزار 721وارداتیں ہوئیں تین ہزار شہریوں کو موبائل فون سے محروم کردیا گیا
دوہزار 390موٹر سائیکل چوری ٗ 218چھین لی گئیں ٗ اغواء برائے تاوان کی 4اور بھتہ خوری کی 6وارداتیں ہوئیں
کراچی (کرائم رپورٹر) کراچی میں اسٹریٹ کرائم کا بے قابو جن مزید بے قابو ہوگیا، یومیہ وارداتیں 180 سے تجاوز کرگئیں، ماہ اگست میں 5 ہزار 721 وارداتیں ریکارڈ کا حصہ بنیں، ایک ماہ کے دوران 3 ہزار شہری موبائل فون سے محروم کردیے گئے، پولیس کی جانب سے صرف 100 موبائل فون برآمد کیے جاسکے۔ تفصیلات کے مطابق سٹیزن پولیس لائژن کمیٹی (سی پی ایل سی) کی رپورٹ کے مطابق اگست کے 31 دنوں کے دوران 2 ہزار 975 موبائل فون چھینے اور چوری کرلیے گئے جبکہ صرف 100 موبائل فون ہی برآمد کیے جاسکے ہیں، دو ہزار 390 موٹر سائیکلیں چوری اور 218 موٹر سائیکلیں چھین لی گئیں لیکن برآمدگی صرف 664 موٹر سائیکلیں ہی کی جاسکی ہیں، 138 شہری گاڑیوں سے محروم کردیے گئے لیکن صرف 72 گاڑیاں ہی برآمد کی جاسکی ہیں۔ دوسری جانب اغوا برائے تاوان کی 4، بھتہ خوری کی 6 اور بینک ڈکیتی کی تین وارداتیں بھی رپورٹ کا حصہ بنیں۔ جولائی میں اسٹریٹ کرائم کی یومیہ اوسط 178 تھی جو ماہ اگست میں بڑھ کر 184 سے بھی تجاوز کرگئی ہے۔ سندھ حکومت اور سندھ پولیس کے درمیان پیدا ہونے والی چپقلش اور پولیس افسران کی تعیناتیوں میں پسند نہ پسند کی جنگ کہیں صوبے میں امن و امان کی صورتحال کو مزید برباد نہ کردے۔