جیلوں میں قید خطرناک مجرمان کی کری نگرانی ٗ سیکورٹی مزید سخت

November 27, 2018 12:10 pm0 commentsViews: 2

بلوچ تنظیموں کے قیدیوں سے رابطوں کی معلومات اکٹھی کی جارہی ہیں ٗ جیلوں میں آپریشن کرنے پر بھی غور شروع کردیا گیا
سینٹرل جیل کراچی اور ملیر جیل کی سیکورٹی سخت ٗ ملاقاتیوں کی بھی نگرانی شروع کردی گئی
کراچی (کرائم ڈیسک) چینی قونصلیٹ پر حملے کے بعد سینٹرل جیل کراچی اور ملیر جیل میں سیکورٹی مزید سخت کردی گئی ہے۔ جیل میں قید خطرناک قیدیوں کی سرگرمیوں پر بھی کڑی نظر رکھی جارہی ہے۔ جیل میں ممکنہ ہنگامہ آرائی کے پیش نظر آپریشن کرنے پر بھی غور کیا جارہا ہے۔ جیل میں بلوچ تنظیموں کے قیدیوں سے رابطوں کی معلومات اکٹھی کی جارہی ہیں۔ نئے آئی جی جیل مظفر عالم صدیقی نے اس ضمن میں سپرنٹنڈنٹ سینٹرل جیل کراچی ممتاز اعوان اور سپرنٹنڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل ملیر محمد حسن سہتو سمیت صوبے کے تمام جیل افسران کو سیکورٹی کے حوالے سے خصوصی احکامات بھی جاری کر دیے ہیں اور کہا ہے کہ تمام قیدیوں سے جیل مینوئل سے ہٹ کر دی گئی اضافی سہولیات واپس لی جائیں۔ اس طرح جیل افسران کو خطرناک قیدیوں سے رابطہ نہ رکھنے کا بھی حکم جاری کر دیا گیا ہے، بتایا جاتا ہے کہ چینی قونصلیٹ خانہ میں گزشتہ روز دہشت گردی کے واقعہ کے بعد آئی جی جیل مظفر عالم صدیقی نے سینٹرل جیل کراچی، ڈسٹرکٹ جیل ملیر سمیت سندھ بھر کی تمام جیلوں میں سیکورٹی کے حوالے سے نئے احکامات جاری کر دیے ہیں خصوصی طور پر جیل میں قید خطرناک قیدیوں کی تمام سرگرمیوں پر کڑی نظر رکھنے اور ان قیدیوں سے ملاقات کے لیے آنے والوں پر بھی کڑی نظر رکھی جارہی ہے۔