پہلی مرتبہ دل کی شریان کا بغیر آپریشن کامیاب علاج

November 27, 2018 12:17 pm0 commentsViews: 9

شہید بے نظیر بھٹو ٹراما سینٹر کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹر محمد سعید قریشی کی سربراہی میں ٹیم نے مریض کی جان بچالی
جان لیوا مرض کا علاج ایک گھنٹے کے قلیل وقت میں کامیابی کے ساتھ مکمل کرلیا گیا، ڈاکٹر فہد
کراچی (اسٹاف رپورٹر) پاکستان میں پہلی مرتبہ سرکاری شعبے کے اسپتال شہید محترمہ بے نظیر بھٹو ٹراما سینٹر میں دل کی شریان کے جان لیوا مرض کا بغیر آپریشن علاج (ٹی ای وی اے آر) کامیابی سے مکمل کرلیا گیا ہے۔ جس کے نتیجے میں ڈاکٹرز نے مریض کی جان بچالی ہے۔ مذکورہ ٹی ور پروسیجر سندھ کے کسی سرکاری اسپتال میں پہلی بار انجام دیا گیا ہے۔ بغیر آپریشن طریقہ علاج کے لیے ترکی سے پروکٹر کے طور پر دو رکنی ٹیم ڈاکٹر اے میق کی سربراہی میں پاکستان پہنچی تھی جبکہ شہید محترمہ بے نظیر بھٹو ٹراما سینٹر کی جانب سے سینٹر کے سربراہ اور ممتاز سرجن پروفیسر ڈاکٹر محمد سعید قریشی کی سربراہی میں ٹیم تشکیل دی گئی جس میں ڈاکٹر عرفان امجد لطفی، ڈاکٹر فہد اور دیگر شامل تھے۔ اس سے پہلے تھور اسکانڈو ویسکیولر اینورزمل ریپیئر (ٹی ور پروسیجر) اسلام آباد میں سرکاری شعبے میں کیا گیا۔ پروفیسر ڈاکٹر محمد سعید قریشی نے بتایا کہ پاکستان کے سرکاری شعبے کے اسپتال میں پہلی مرتبہ انجام دیا جانے والا پروسیجر خاصا مہنگا ہے جو سندھ حکومت کے خرچ پر کیا جارہا ہے اور اس میں ایف ڈی اے اور سی مارک سے منظور شدہ اسٹنٹ و دیگر آلات خصوصی طور پر درآمد کیے گئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اس پروسیجر سے پہلے اس اورٹا aorta کا علاج بڑے آپریشن کے ذریعے کیا جاتا تھا جس میں بڑے آپریشن کے دیگر خطرات بھی موجود رہتے تھے۔ تاہم اس پروسیجر میں ٹانگ میں آنے والی شریان میں ایک باریک سوراخ کے ذریعے متاثرہ مقام تک ڈیوائس پہنچا دی جاتی ہے جس سے شریان کے غبارے کی طرح پھول کر پھٹنے کا خطرہ ٹل جاتا ہے۔ ڈاکٹر فہد نے بتایا کہ یہ پروسیجر ایک گھنٹے کے قلیل وقت میں کامیابی کے ساتھ مکمل کیا گیا، پچھلے دو سے تین ماہ میں ہمارے پاس ایسے مزید مریض رپورٹ ہوئے ہیں ابھی پاکستان میں ایسے مریضوں کی ٹھیک تعداد معلوم ہونا ممکن نہیں۔