ڈالر نے روپے کو روند ڈالا ٗ 151پر ناٹ آئوٹ ٗ پاکستانی کرنسی بدترین قرار

May 18, 2019 11:00 am0 commentsViews: 1042

ایف آئی اے نے ڈالر کی ذخیرہ اندوزی کرنیوالوں کیخلاف ملک گیر کریک ڈائون کا فیصلہ کرلیا ٗ ٹیمیں بھی تشکیل دیدی گئیں
ملکی کرنسی مارکیٹ میں امریکی ڈالر کی اونچی پرواز جاری ٗانٹر بینک مارکیٹ میں 2روپے 48پیسے کا اضافہ دیکھا گیا ٗ اوپن مارکیٹ میں ریٹ 4 روپے چڑھ گیا وفاقی حکومت ڈالر کی اونچی اڑان روکنے کیلئے متحرک ہوگئی
پاکستانی کرنسی افغانستان ٗ بنگلہ دیش اور نیپال سے بھی پیچھے رہ گئی ٗ گزشتہ 8ماہ کے دوران کارکردگی کے لحاظ روپیہ بدترین رہا ٗ مئی 2018سے اب تک روپے کی قدر میں 29فیصد کمی ہوئی ہے ٗ بلوم برگ
کراچی(کامرس رپورٹر)روپے کے مقابلے ڈالرمزید مہنگا ہو گیا،، اوپن مارکیٹ میں 151روپے میں فروخت۔مارکیٹ میں ڈالر کی پرواز جاری ہے جو روپے کے مقابلے میں نئی بلند ترین سطح پر جا پہنچا۔ پاکستانی کرنسی کو بد ترین قرار دے دیا گیا ہے۔تجزیہ کاروں کے مطابق آئی ایم ایف کی شرائط پر من و عن عمل درآمد کے بعد روپے کی قدر میں گراوٹ رکنے کا نام نہیں لے رہی، ملک میں مہنگائی کے سبب پہلے ہی عوام کا جینا دو بھر ہو چکا ہے ایسے میں ڈالر کے ریٹ میں اضافہ مہنگائی مزید بڑھنے کاباعث بنے گا۔نجی ٹی وی کے مطابق ایک بار پھراوپن مارکیٹ اورانٹربینک میں ڈالر کو پر لگ گئے ہیں جو روپے کے مقابلے میں نئی بلند ترین سطح پرجا پہنچا ہے۔ جمعے کے روز اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قدر میں 4روپے کا اضافہ ہوا جس کے نتیجے میں ڈالر کی قدر بڑھ کر151روپے کی نئی بلندترین سطح پرپہنچ گئی۔ اوپن مارکیٹ میں ایک امریکی ڈالر 4 روپے مہنگا ہو کر 151 روپے تک پہنچ گیا ہے۔ انٹر بینک مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 2 روپے 48 پیسے بڑھ گئی جبکہ سٹاک مارکیٹ کا 100 انڈیکس بھی 804 پوائنٹس گر گیا۔کاروبار کے دوران انٹربینک ڈالر ریٹ میں 2 روپے 48 پیسے کا اضافہ دیکھا گیا، اس طرح انٹر بینک مارکیٹ میں اب ڈالر کی 149 روپے پر بند ہوا۔ دوسری جانب اوپن مارکیٹ میں ڈالر کا ریٹ 4 روپے چڑھ گیا اور تاریخ کی بلند ترین سطح یعنی 151 روپے پر لین دین ہوتا رہا۔ گزشتہ روز ڈالر کے ریٹ میں5 روپے 60 پیسے کا بڑا اضافہ ہوا اور کاروبار کے اختتام پر ڈالر 147 روپے پر بند ہوا۔ دو روز کے دوران امریکی ڈالر کی قیمت بڑھنے سے ملک پر عائد واجب الادا قرضوں میں 800 روپے کا مزید اضافہ ہوگیا ۔دوسری طرف سٹاک مارکیٹ میں بھی شدید مندی کا رجحان رہا اور 804 پوائنٹس کی گراوٹ ہوئی، 100 انڈیکس 33 ہزار 166 پوائنٹس پر بند ہوا۔ سرمایہ کار کچھ دنوں کے محتاط ررویہ اپنائے ہوئے ہیں۔دوسری طرفپاکستانی روپے کے مقابلے میں ڈالر کی اونچی اڑان اور اسٹاک مارکیٹ میں مزید مندی کو پیش نظر وفاقی حکومت متحرک ہوگئی ہے۔ ایف آئی اے نے ڈالر کی ذخیزہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف کریک ڈان کا فیصلہ کر لیا۔ اور ٹیمیں بھی تشکیل دے دی گئی ہیں۔ذرائع کے مطابق ڈالر ذخیرہ کرنے والے منی چینجرز کے خلاف کارروائی کی جائے گی جس کیلئے ایف آئی اے نے ویجی لینس شروع کردی ہے۔ایف آئی اے ذرائع کے مطابق ڈالر کی مصنوعی قلت کسی صورت پیدا نہیں ہونے دی جائے گی۔