مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملہ : واردات میں 6 دہشت گرد شامل تھے

March 23, 2019 11:00 am0 commentsViews: 630

کراچی: مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملے میں 6 دہشت گرد شامل تھے، ان میں شامل موٹرسائیکل سوار 2 دہشت گردوں نے مفتی تقی عثمانی کا دارالعلوم کورنگی سے تعاقب کیا، ان ہی دہشت گردوں نے نیپا فلائی اوور کے اوپر ان کی گاڑی پر فائرنگ بھی کی۔

نجی ٹی وی کے مطابق فلائی اوور اترتے ہی دیگر دو دہشت گردوں نے گاڑیوں پر فائرنگ کی، دہشت گردوں کی جانب سے واردات میں دو ہتھیار استعمال کیے گئے۔ تحقیقاتی ذرائع کا کہنا ہے کہ مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملے کی تحقیقات جاری ہیں، مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملے کی واردات میں 6 دہشت گرد شامل تھے۔

مفتی تقی عثمانی پر 2بار 3اطراف سے قاتلانہ حملہ کیا گیا جس سے ان کی گاڑی کی بیک اسکرین، ونڈ اسکرین اور کھڑکیوں کے شیشے ٹوٹے جبکہ گاڑی کے دیگر حصوں پر بھی گولیاں لگیں تاہم وہ اور ان کے اہلخانہ معجزانہ طور پر محفوظ رہے۔ تحقیقاتی ذرائع نے مزید بتایا کہ دہشت گردوں کی جانب سے واردات میں دو نائن ایم ایم پستولیں استعمال کی گئیں جس کی فارنزکس جاری ہیں۔