کرتارپور راہداری: طویل عرصے بعد پاک بھارت مشترکہ اعلامیہ جاری

March 14, 2019 3:24 pm0 commentsViews: 15

لاہور: پاکستان اور بھارتی حکام کے مابین کرتارپور راہداری سے متعلق آج ہونے اولے مذاکرات کا مشترکہ اعلامیہ جاری ہوا جس پر ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل کا کہنا ہے کہ راہداری سے متعلق بعض معاملات پر تاحال اختلافات ہیں، جن کی تفصیلات نہیں بتاسکتا مگر مشترکہ اعلامیہ جاری ہونا اہم کامیابی ہے ۔

ذرائع ابلاغ کے مطابق راہداری سے متعلق پاک بھارت مذاکرات کے بعد پاکستان آنے پر ترجمان دفترخارجہ نے واہگہ بارڈرپرگفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کرتارپورراہداری کے طریقے اورمسودے سے متعلق پہلی ملاقات میں ماحول خوشگوار تھا۔ چند معاملات پر اختلافات موجود ہیں جن کی تفصیل ظاہر نہیں کی جا سکتی، تاہم کرتارپور صاحب میں زائرین کی آمدورفت کی سہولت سے متعلق پہلے اجلاس میں غور ہوا۔ ترجمان دفتر خارجہ نے بتایا کہ 2 اپریل کوکرتارپورراہداری سے متعلق ملاقات واہگہ بارڈر پر ہوگی۔ اس حوالے سے مشترکہ اعلامیہ جاری ہونا بڑی کامیابی ہے کیونکہ بھارت کے ساتھ کبھی بھی مشترکہ اعلامیہ طویل عرصے سے جاری نہیں ہوا۔ اعلامیے کے مطابق مجوزہ معاہدے کی فراہمی اور کرتارپورراہداری کے کام کو تیزترکرنے پر اتفاق ہوا۔ تکنیکی سطح پر بھی دنوں ممالک کے ماہرین کے درمیان بات ہوئی۔ کرتار پور راہداری ویزا فری کوریڈور،ہے جس کے لیے ویزے کی شرط نہیں۔