سندھ حکومت‘ آئی جی میں پولیس ایکٹ پر نیا تنازع کھڑا ہوگیا

May 15, 2019 12:11 pm0 commentsViews: 4

کراچی( مانیٹرنگ ڈیسک) حکومت سندھ اور سندھ پولیس کے درمیان نئے پولیس ایکٹ پر نیا تنازع کھڑا ہوگیا ہے اور اب یہ تنازعہ سندھ ہائی کورٹ میں جانے کا امکان ہے کیوں کہ اب تک حکومت سندھ اور سندھ پولیس کی کمیٹیوں کے4 اجلاس بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوچکے ہیں۔ حکومت سندھ سابق فوجی سربراہ پرویز مشرف کا پولیس آرڈر2002 بہت معمولی تبدیلیوں کے ساتھ نئی شکل میں سندھ اسمبلی میں لانا چاہتی ہے جس میں گریڈ18 تک کے ایس پی کے تبادلوں کا اختیار آئی جی سندھ کو دیا جائیگا۔ گریڈ19 سے لے کر گریڈ21 تک کے پولیس افسران کے تبادلوں کا اختیار وزیراعلیٰ سندھ کو دیا جائیگا۔ آئی جی سندھ پولیس کا واضح موقف ہے کہ تبادلوں کے اختیارات وہی ہونے چاہئیں جو سندھ ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ نے دے رکھے ہیں اس پر کسی بھی قسم کا سمجھوتہ نہیں کیا جاسکتا جبکہ حکومت سندھ گریڈ19 سے لے کر گریڈ21 تک کے پولیس افسران کے تبادلوں کے اختیارات وزیراعلیٰ کو دینے کے معالے سے دستبردار ہونے کیلئے تیار نہیں‘ اس طرح تبادلوں کے معاملے پر وزیراعلیٰ اور آئی جی پیچھے ہٹنے کے قطعی تیار نہیں‘ اس لئے کہا جارہا ہے کہ تبادلوں کے اختیارات کے معاملات سندھ ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ میں ہی طے ہوسکیں گے۔