کراچی میں قبروں کی فیس میں 100 فیصد اضافہ قبرستان میںگورکن مافیا قابض

July 20, 2019 12:43 pm0 commentsViews: 42

بلدیہ کراچی نے قبر کی الاٹمنٹ فیس 4 ہزار 5 سو روپے کی تھی جو اب 9 ہزار روپے کردی گئی ہے، شہریوں کو صرف پرچی ملتی ہے
شہر بھر کے درجن بھر سے زائد قبرستانوں میں تدفین پر پابندی کے باوجود قبروں کی نیلامی جاری، قبروں کی قیمت 20 سے 70 ہزار وصول کی جارہی ہیں
کراچی (نیوز ڈیسک) کراچی میں قبروں کی فیس میں 100 فیصد اضافہ کر دیا گیا۔ بلدیہ کراچی کے تمام قبرستان گورکن مافیا کے حوالے کر دیے گئے۔ تفصیلات کے مطابق کراچی میں بلدیہ کراچی کے زیر انتظام 100 سے زائد قبرستانوں کو گورکن مافیا کے پاس رہن رکھوا دیا گیا ہے، ایک درجن سے زائد قبرستانوں میں تدفین پر پابندی کے باوجود یہاں قبروں کی نیلامی کا عمل جاری ہے، بلدیہ کراچی نے قبر کی الاٹمنٹ کی فیس 4500 روپے بمع میٹریل کی تھی اب اس میں 100 فیصد اضافہ کر کے فیس 9000 روپے کر دی گئی ہے مگر حیرانگی کی بات یہ ہے کہ اس فیس کے عوض شہریوں کو صرف گورکن کی پرچی ملتی ہے۔ قبر کی الاٹمنٹ کے لیے شہریوں کو قبرستانوں میں قابض گورکن مافیا کی بولی کے مرحلے سے گزرنا پڑتا ہے۔ شہر میں سب سے مہنگا قبرستان سوسائٹی قبرستان ہے جہاں قبر 40 ہزار سے 70 ہزار میں بک کی جاتی ہے حالانکہ یہاں تدفین پر 1999ء سے پابندی عائد ہے۔ شہر کے ایک اہم قبرستان میں جوکہ پاپوش میں واقع ہے بلدیہ کراچی افسران کا کہنا ہے کہ یہاں گورکن مافیا داخل بھی نہیں ہونے دیتا یہاں مکمل طور پر گورکن مافیا کا راج ہے۔ یہاں قبر 25 ہزار سے 50 ہزار تک فروخت کی جاتی ہے۔ سخی حسن قبرستان میں بھی 30 ہزار سے 60 ہزار تک قبر نیلام کی جاتی ہے۔ میوہ شاہ اور مواچھ گوٹھ قبرستانوں میں 20 سے 40 ہزار تک قبر فروخت ہو رہی ہے۔