سندھ میڈیکل کالج اور اس کے سیکڑوں طلباء کا مستقبل خطرے میں پڑ گیا

August 9, 2019 12:07 pm0 commentsViews: 7

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ کے 46 سال پرانے میڈیکل کالج اور اس کے سینکڑوں طلبا کا مستقبل خطرے میں پڑ گیا ہے۔ پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل (پی ایم ڈی سی )کی انسپیکشن ٹیم نے جمعرات کو سندھ میڈیکل کالج اور اس سے منسلک اسپتالوں قومی ادارہ صحت برائے اطفال، قومی ادارہ برائے امراض قلب اور جناح پوسٹ گریجویٹ میڈیکل سینٹر کی انسپیکشن کی۔جس کے بعد ٹیم کے کنوینئرڈاکٹر عثمان محبوب نے تحریری طور پر پی ایم ڈی سی کے صدر ،رجسٹرار ، انسپیکشن کمیٹی کے چیئرمین اور کالج کی انتظامیہ کو آگاہ کیا کہ قومی ادارہ صحت برائے اطفال کی انسپیکشن کے بعد جب ٹیم جناح اسپتال کے شعبہ سرجری کی انسپیکشن میں مصروف تھی تو اسپتال کی ایگزیگیٹیو ڈائریکٹر ڈاکٹر سیمی جمالی نے ٹیم کو انسپیکشن سے منع کر دیااور یہ کہہ کر واپس بھیج دیا کہ جناح اسپتال ،سندھ میڈیکل کالج سے منسلک نہیں ہیصرف کالج کے طلبا کو کلینیکل ٹریننگ کی اجازت دی گئی ہے۔ پی ایم ڈی سی کی انسپیکشن ٹیم کے ایک رکن نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ وہ پورے ملک میں میڈیکل کالجز اور ان سے منسلک اسپتالوں کی انسپیکشن کرتے ہیں کبھی ایسا نہیں ہوا کہ انہیں روکاگیا ہو۔