سندھ میں 15این جی اوز کالعدم جماعتوں کی سہولت کار ٗ جے آئی ٹی تشکیل

August 10, 2019 12:52 pm0 commentsViews: 15

سی ٹی ڈی حکام کی طرف سے محکمہ داخلہ کو ارسال خط میں جیش محمد ۔جماعت الدعوۃ اور فلاح انسانیت فائونڈیشن کے اثاثوں کی چھان بین
مشکوک سرگرمیوں میں ملوث این جی اوز کیخلاف کارروائی کی رپورٹ طلب کرلی ٗ الفرقان ٹرسٹ کیخلاف بھی کارروائی کی ہدایت
کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) محکمہ داخلہ سندھ نے کالعدم قرار دی جانے والی تین بڑی دینی و فلاحی تنظیموں کے سندھ میں موجود اثاثوں سے متعلق جے آئی ٹی تشکیل دے دی ہے۔ الفرقان ٹرسٹ کراچی کے خلاف بھی کارروائی کی ہدایت کی گئی ہے، کالعدم تنظیموں کی سہولت کاری میں ملوث سندھ کی 15 سے زائد این جی اوز کے خلاف بھی کارروائی کا فیصلہ کر لیا گیا ہے۔ وزارت داخلہ نے محکمہ داخلہ سندھ سے مشکوک سرگرمیوں میں ملوث این جی اوز کے خلاف کارروائی کی رپورٹ طلب کر لی ہے۔ تفصیلات کے مطابق وزارت داخلہ کی منظوری کے بعد سی ٹی ڈی حکام کی طرف سے محکمہ داخلہ کو ارسال خط میں کالعدم قرار دی جانے والی تین دینی فلاحی تنظیموں جیش محمد، جماعت الدعوۃ اور فلاح انسانیت فائونڈیشن کے منجمد کیے گئے 59 اثاثوں کی چھان بین کے لیے جے آئی ٹی تشکیل دینے کی سفارش کر دی ہے، محکمہ داخلہ سندھ نے سی ٹی ڈی حکام کی طرف سے ریفرنس موصول ہونے کے بعد جے آئی ٹی تشکیل دینے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا ہے جس کے مطابق ایس ایس پی سی ٹی ڈی انوسٹی گیشن کراچی اس جے آئی ٹی کے چیئرمین ہوں گے۔ جے آئی ٹی کے دیگر اراکین میں اسٹیٹ بینک، فنانشل مانیٹرنگ یونٹ، ایس ای سی پی، ایف آئی اے، آئی بی اور بورڈ آف ریونیو کے نمائندے شامل ہوں گے۔ نوٹیفکیشن کے مطابق اگر جے آئی ٹی چاہے تو کسی بھی ادارے یا محکمے کی بھی اس سلسلے میں معاونت حاصل کرسکتی ہے اور 30 دنوں میں رپورٹ مرتب کرے گی۔ جے آئی ٹی حکام چھان بین کے دوران اس بات کا پتا لگائیں گے کہ ان تنظیموں کے عہدیداروں نے کن وسائل سے یہ املاک بنائیں، زمین کس طرح خریدی، مدارس اور دیگر فلاحی اداروں کے اخراجات کہاں سے پورے کیے جاتے تھے، کون سے اداروں اور افراد کی طرف سے ان کالعدم تنظیموں کو چندہ فراہم کیا جاتا تھا۔