ماڈل کورٹ ایک قاتل کو سزائے موت دوسرے کو عمر قید

August 23, 2019 12:10 pm0 commentsViews: 3

سات سال سے زیر التواء قتل کیس میں عمران عرف پٹیل پر جرم ثابت، 5 لاکھ روپے جرمانہ بھی عائد کردیا گیا
مجرم فضل نے لانڈھی میں ہاتھا پائی کے دوران عبدالعقیل کو فائرنگ کرکے قتل کردیا تھا
کراچی(اسٹاف رپورٹر) ماڈل کورٹ شرقی نے سات سال سے التواء قتل کیس کا فیصلہ سنادیا۔ عدالت نے مجرم کو جرم ثابت ہونے پر سزائے موت کا حکم سنادیا۔ تفصیلات کے مطابق ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج ماڈل کرمنل ٹرائل کورٹ شرقی حلیم احمد نے قتل کیس میں ملوث ملزم عمران عرف پیٹل کو وکیل سرکاری ڈپٹی پبلک پراسیکیوٹر محمد یونس اور وکیل صفائی کے دلائل سننے کے بعد جرم ثابت ہونے پر سزائے موت کا حکم سنادیا۔ جبکہ مقتول کے ورفاء کو قصاص دیت کے طو رپر5لاکھ روپے بطور جرمانہ ادا کرنے کا حکم دیا ہے جرمانہ ادا نہ کرنے پر مجرم کو مزید چھ ماہ قید بھگتنی ہوگی۔ مجرم کیخلاف تھانہ کھوکھرا پار میں مقدمہ درج کیا گیا تھا مجرم واردات کے موقع سے فرار ہوگیاتھا۔ مجرم کیخلاف تھانہ گڈاپ میں تعینات ہیڈ محرر زاہد حسین نے اپنے دوست مقتول طیب حسین کے قتل کا مقدمہ درج کیا تھا۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ مقتول اور مجرم کے درمیان لین دین کا تنازعہ تھا۔ مجرم نے اپنے کاروباری پارٹنر طیب حسین کو پانچ سو روپے کے تنازعہ پر فائرنگ کرکے قتل کیا او موقع سے فرار ہوگیا تھا۔ دوسرے قتل کیس میں ملوث مجرم کو جرم ثابت ہونے پرعمر قید کی سزا سنائی ہے یا جمعرات کوکرمنل ٹرائل کورٹ شرقی نے قتل کیس میں نامزد فضل کوجرم ثابت ہونے پر عمر قید کی سزاسنادی۔ مقدمے میں مجرم کا ساتھی بلال اشتہاری ہے۔ مجرم کیخلاف مقتول کے بھائی عبدالشکیل کی مدعیت میں مقدمہ تھانہ لانڈھی میں درج ہے۔ دوران سماعت پراسیکیوٹر نے بتایا کہ مجرم نے بابر مارکیٹ کے علاقے میں واقع بینک کے نزدیک گنے کی مشین چلانے والے مقتول عبدالعقیل کے ساتھ نامعلوم وجوہات کی بناء پر ہاتھا پائی کی اور فائرنگ کرکے قتل کردیا تھا۔