کراچی میں ٹریفک سگنل پر لوگ لوٹے جاتے ہیں ‘سپریم کورٹ

October 18, 2019 12:02 pm0 commentsViews: 3

پولیس کی ناک کے نیچے منشیات کا دھندا ، فائر کہیں کرنا ہوتا بندوق کہیں اور ہوتی ہے ،جسٹس گلزار
امل ازخود کیس ، نیشنل میڈیکل سینٹر کے خلاف انکوائری ،ایک ماہ میںرپورٹ پیش کرنیکا حکم
اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک )امل عمر ازخود نوٹس کیس کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن کو نیشنل میڈیکل سنٹر کے خلاف انکوائری کی ہدایت کرتے ہوئے ایک ماہ میں رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ کراچی پولیس نے فائر کہیں اور کرنا ہوتا ہے بندوق کہیں اور ہوتی ہے ، کراچی میں ٹریفک سگنل پر رکے لوگ لٹ جاتے ہیں جبکہ پولیس کی ناک کے نیچے منشیات کا دھندا ہوتا ہے ، ابھی چلے جائیں کالا پل کے نیچے نشئی سوئے پڑے ہوں گے۔جسٹس گلزار نے استفسار کیا کہ امل کو قتل کرنے والے اہلکاروں کا کیا بنا؟ کیا امل کے والدین کو امدادی پیکیج فراہم کیا گیا؟ سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ امل کے والدین نے کبھی امداد نہیں مانگی جبکہ والدین کے وکیل فیصل صدیقی کا کہنا تھا کہ امداد کی سفارش والدین نے کی تھی۔جسٹس گلزار نے ریمارکس دئیے کہ لواحقین دوائی کی لائن میں لگے رہتے ہیں اور مریض اللہ کو پیارے ہو جاتے ہیں۔ عدالت عالیہ نے امدادی پیکیج کے حوالے سے سندھ حکومت سے جواب طلب کرتے ہوئے سماعت ایک ماہ کیلئے ملتوی کر دی۔