خفیہ کیمروں کی لاگت میں 12 ارب روپے کا اضافہ

October 23, 2019 12:44 pm0 commentsViews: 4

شہر قائد میں 2 ہزار مقامات پر 10 ہزار سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب کے منصوبے پر عمل درآمد میں تاخیر وجہ بنی
کراچی ( مانیٹرنگ ڈیسک) شہر کے 2 ہزار مقامات پر10 ارب روپے کی لاگت سے 10 ہزار سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب کے منصوبے پر عمل درآمد میں تاخیر کی وجہ سے اس کی لاگت میں بارہ ارب روپے کا اضافہ ہوچکا ہے۔ اس بات کا انکشاف سرکاری ذرائع نے کیا ہے۔ ان ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈالرز کی قیمتوں اور الیکٹرونکس کی اشیا کی قیمتوںمیں اضافے کے باعث اب سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب کی لاگت میں کم ازکم دو گنا اضافہ ہوچکا ہے۔ اس لیے اس پروجیکٹ پر اب 22 ارب روپے لاگت آئے گی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ کراچی میں مزید صرف 10 ہزار کلوز سرکٹ ٹی وی کیمروں کی ضرورت نہیں ہے بلکہ ان کی ضرورت بھی کم ازکم 65 ہزار تک پہنچ چکی ہے۔ تاہم صحیح اندازہ منصوبے کے پی سی ون کی تیاری کے بعد ہی ہوسکے گا۔ اب اس منصوبے کے لیے صرف کنسلٹنسی ورک ہی مکمل کیا گیا جو قواعد کے خلاف کنسلٹنٹ کی مدد حاصل کرکے سابق انسپکٹر جنرل پولیس نے کرایا تھا۔ طریقہ کار کے تحت پی سی ون کی تیاری کے بعد پروجیکٹ پر عمل درآمد کے لیے کنسلٹنسی کرائی جاتی ہے اور کنسلٹنٹ کی خدمات بھی سیپرا قوانین کے تحت حاصل کی جاتی ہیں۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ اگر اس منصوبے پر اب بھی عمل درآمد نہیں کیا گیا تو یہ پروجیکٹ بھی ’’ ڈیڈ ’’ پروجیکٹس میں شامل ہوجائے گا جن پر برسوں سے صرف ابتدائی کاغذی کام ہی ہورہے ہیں۔ خیال رہے کہ کراچی میں ویجلینس نظام مؤثر بنانے کے لیے سپریم کورٹ کے 2016 کے حکم کے تحت دس ہزار سیکورٹی کیمرے لگانے کا فیصلہ کیا گیا تھا اس مقصد کے لیے صوبائی حکومت نے 10 ارب روپے کی رقم بھی مختص کی تھی۔ لیکن اس منصوبے پر 3 سال گزر نے اور وزیراعلیٰ مراد علی شاہ کی مسلسل دلچسپی کے باوجود عمل درآمد ممکن نہیں بنایا جاسکا۔