پلاسٹک ری سائیکلنگ کے غیر قانونی کارخانے سیل

October 23, 2019 1:37 pm0 commentsViews: 2

غیر سائنسی طریقے سے زنک آکسائیڈ بنانے والے گھریلو کارخانوں کو بھی بند کردیا گیا
کارروائیاں شیر شاہ میں سندھ انوائر مینٹل پروٹیکشن ایجنسی کی ٹیم نے مرتضیٰ وہاب کی ہدایت پر کیں
کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ انوائرمنٹل پروٹیکشن ایجنسی (سیپا) کی ٹیم نے شیرشاہ طور بابا کے علاقے میں پلاسٹک ری سائیکلنگ اور زنک آکسائیڈ بنانے والے کئی غیر قانونی کارخانوں کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے کام بند کروا کر انہیں سیل کر دیا۔ ترجمان کے مطابق کارروائی سندھ حکومت کے ترجمان اور مشیر ماحولیات و ساحلی ترقی مرتضیٰ وہاب کی ہدایت پر کی گئی جبکہ اس کی نگرانی ڈپٹی ڈائریکٹر سیپا ضلع غربی وارث علی گبول نے کی۔ اسسٹنٹ کمشنر ضلع غربی اور سیپا کے انسپکٹرز ان کے ہمراہ تھے، ڈپٹی ڈائریکٹر سیپا ضلع غربی کے مطابق غیر قانونی گھریلو کارخانوں میں غیر سائنسی طریقے سے زنک آکسائیڈ بنایا جارہا تھا جبکہ پلاسٹک کی ری سائیکلنگ بھی کی جارہی تھی جو ماحولیاتی آلودگی اور انسانی صحت کے لیے انتہائی خطرناک ہے۔ مذکورہ کارخانے ماحولیاتی آلودگی کا باعث بن رہے تھے یہ کارخانے کسی مستند ادارے سے رجسٹرڈ بھی نہیں تھے، وارث علی گبول نے بتایا کہ کارخانے غیر قانونی طور پر رہائشی علاقوں میں قائم کیے گئے تھے۔