ضلع شرقی میں ترقیاتی ٹینڈ ر ز چہیتوں میں تقسیم

November 14, 2019 2:38 pm0 commentsViews: 11

فائلوں کا پیٹ بھرنے کیلئے بوگس این آئی ٹی طلب کئے جانے کا انکشاف
ٹھیکیداروں کا بندر بانٹ پر تحقیقاتی اداروں اور سیپرا سے نوٹس لینے کا مطالبہ
کراچی(وقا ئع نگار خصوصی)ضلع شرقی میں 17ترقیاتی کاموں کی ایک اور بوگس این آئی ٹی طلب کئے جانے کا انکشاف،چہیتوں کو نوازنے کیلئے دس دس لاکھ لاگت کے کاموں کے ٹینڈرز طلب ، ٹھیکیداروں کو این آئی ٹی کے ڈاکومنٹس فراہم کرنے سے افسران نے صاف انکار کردیا، ترقیاتی کام پہلے ہی چہیتوں میں تقسیم کئے جاچکے ہیں،فائلوں کا پیٹ بھرنے کیلئے این آئی ٹی طلب کی گئی،کراچی کے ٹھیکیداروں نے ڈی ایم سی حکام پر ترقیاتی کاموں کی بندر بانٹ کا الزام عائد کرتے ہوئے تحقیقاتی اداروں اور سیپرا سے فوری نوٹس لینے کا مطالبہ کردیا۔تفصیلات کے مطابق بلدیہ ضلع شرقی میں ایک مرتبہ پھر 17ترقیاتی کاموں کے ٹینڈرز طلب کئے گئے ہیں،ذرائع کا کہنا ہے کہ ترقیاتی فنڈ چہیتوں پر نچھاور کرنے کیلئے دس دس لاکھ لاگت کے کاموں کے ٹینڈرز کر کے پورے ضلع کا ترقیاتی بجٹ ٹھکانے لگایا جارہا ہے،شہر کے سینئر کنٹریکٹرز کا کہنا ہے کہ دس دس لاکھ کے ترقیاتی کام ایک فراڈ ہے جس میں لاگت کی نصف سے زائد رقم کمیشن کی ادائیگی میں پوری ہو جاتی ہے،کنٹریکٹرز کے مطابق ڈی ایم سی ایسٹ میں 10لاکھ لاگت کے سینکڑوںٹینڈرز کئے جاچکے ہیں جس میں سے بیشتر ٹینڈر صرف فائلوں کا پیٹ بھرنے کیلئے کئے گئے ہیں،دریں اثناء مذکورہ17کاموں کے طلب ٹینڈرز کے ڈاکومنٹس تاحال کسی ٹھیکیدار کو فراہم نہیں کئے گئے،ٹھیکیداروں کا کہنا ہے جن کاموں کیلئے ٹینڈر طلب کئے گئے ہیں وہاں کام کی ضرورت ہی نہیں،محکمے کے افسران ٹینڈ رڈاکومنٹس فراہم نہیں کررہے اور اس این آئی ٹی کی بھی سابقہ دیگر این آئی ٹیز کی طرح بوگس ٹینڈرنگ کرکے فائلوں کا پیٹ بھرنے کی تیاریاں کرلی گئی ہیں ،ٹھیکیداروں کے مطابق ضلع شرقی گلشن اقبال زون کے طلب کئے گئے 17کاموں کے ٹینڈر کے ڈاکومنٹس حاصل کرنے کیلئے 21 نومبر آخری تاریخ مقرر ہے جبکہ 22نومبر کو ٹینڈر اوپنگ کی تاریخ مقرر ہے ،7نومبر سے ٹینڈر ڈاکومنٹس فراہم کئے جانے تھے جو تاحال شروع نہیں کئے گئے،ٹھیکیداروں نے ٹینڈر ڈاکومنٹس کی عدم فراہمی اور مبینہ بوگس ٹینڈرنگ کر کے سرکاری فنڈ کی بندر بانٹ پر سیپرا سمیت تحقیقاتی ادارے سے فوری نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔