جناح اسپتال کے ڈاکٹروں کا احتجاج، اوپی ڈی بند،مریض پریشان

February 14, 2020 1:28 pm0 commentsViews: 5

سینئر پروفیسرز، فیکلٹی اور ینگ ڈاکٹرز نے کام چھوڑ کراحتجاج کے بعد ریلی بھی نکالی
مسائل حل نہ کیے گئے تو شعبہ حادثات کے سوا تمام شعبے بند کر دیں گے، مظاہرین
کراچی (اسٹاف رپورٹر) جناح اسپتال کراچی کے ڈاکٹروں نے جمعرات کو احتجاج کیا اور دو گھنٹے تک او پی ڈی کا بائیکاٹ کیا ، جس کے باعث مریضوں کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔ سینئر پروفیسرز، فیکلٹی اور ینگ ڈاکٹرز نے کام چھوڑ کر نجم الدین آڈیٹوریم کے سامنے صبح 9سے 11 بجے تک احتجاج جاری رکھا اور نجم الدین آڈیٹوریم سے سرجیکل او پی ڈی تک ریلی بھی نکالی۔ مظاہرین نے بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے ، جن پر ان کے مطالبات اور مختلف نعرے درج تھے۔ مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ اسپتال کے ڈاکٹروں کو جناح سندھ میڈیکل یونیورسٹی کے ساتھ منسلک رہنے دیا جائے ، سندھ اور وفاقی حکومتیں ایک کمیٹی بنائیں اور ڈاکٹروں سے مذاکرات کریں ، خدا کے لئے ایسے اقدامات نہ کئے جائیں جن سے انتشار پھیلے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اگر کمیٹی نہ بنائی گئی اور مسائل حل نہ کیے گئے تو جمعہ کے روز بھی احتجاج جاری رہے گا، جس کے بعد پیر سے او پی ڈی کا مکمل بائیکاٹ کیا جائے گا اور پھر بھی مسائل حل نہ کیے گئے تو شعبہ حادثات کے سوا تمام شعبہ جات بند کر دیئے جائیں گے۔ بعد ازاں صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر عذرا فضل پیچوہو اور سیکریٹری صحت زاہد علی عباسی نے ڈاکٹروں کو مذاکرات کے لئے طلب کیا اور احتجاج ختم کرنے کی درخواست کی۔ صوبائی وزیر صحت اور سیکریٹری صحت کا کہنا تھا کہ عدالتی احکامات کے باعث وہ فی الحال کچھ نہیں کر سکتے اس لئے مارچ تک انتظار کرنا پڑے گا۔