گرفتار 8افراد شخصی ضمانت پر رہا ٗ فوجداری مقدمات پر عدالت برہم

March 25, 2020 11:59 am0 commentsViews: 5

شہریوں پر کسی قانون کے تحت فوجداری ٗ مقدمات درج کئے اس جرم میں ایف آئی آر کس جارہی ہے ٗ عدالتی ریمارکس
پولیس حکام عدالت کو مطمئن کرنے میں ناکام ٗ بغیر وارنٹ کے گرفتاری نہیں ہوسکی ٗ جوڈیشل مجسٹریٹ غربی آصف علی عباسی
کراچی (اسٹاف رپورٹر) عدالت نے لاک ڈائون کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف فوجداری کے مقدمات میں گرفتار 8 ملزمان کو شخصی ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دے دیا، سٹی کورٹ میں جوڈیشل مجسٹریٹ غربی آصف علی عباسی کے روبرو لاک ڈائون کی خلاف ورزی کرنے والوں پر فوجداری مقدمات کی سماعت ہوئی، جوڈیشل مجسٹریٹ غربی آصف علی عباسی نے پولیس حکام پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیے کہ شہریوں پر کس قانون کے تحت فوجداری مقدمات درج کیے گئے، اس جرم میں ایف آئی آر کس قانون کے مطابق دائر کی جارہی ہے، ضابطہ فوجداری شیڈول 2، دفعہ 188 تعزیرات پاکستان کے تحت بغیر کسی وارنٹ کے گرفتاری نہیں ہوسکتی، عدالت نے استفسار کیا کہ ایسے جرم میں متعلقہ عدالت کی اجازت کے بغیر ایف آئی آر کیسے درج کی جاسکتی ہے، شیڈول 2 میں صاف لکھا ہوا ہے کہ دفعہ 188 تعزیرات پاکستان ناقابل دست انداز جرم ہے اس سیکشن کے تحت پولیس بغیر وارنٹ کے گرفتار نہیں کر سکتی۔ ضابطہ فوجداری دفعہ 155 کے تحت صرف شکایت متعلقہ کورٹ میں کی جاسکتی ہے اور ایسے جرم میں صرف کورٹ سمن جاری کرسکتی ہے اور اس جرم میں بغیر گرفتاری وارنٹ کے کسی کو گرفتار بھی نہیں کیا جاسکتا۔ پولیس حکام عدالت کو مطمئن کرنے میں ناکام رہے، عدالت نے 8 ملزموں کو شخصی ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دے دیا، جوڈیشل مجسٹریٹ آصف علی عباسی نے شہریوں کو قانون کی پاسداری کرنے کی ہدایت کردی عدالت نے شہریوں کو ہدایت کی کہ اس صورتحال میں آپ اداروں کا ساتھ دیں، لاک ڈائون کا مطلب گھروں پر رہنا ہے گھومنا نہیں، آپ گھروں سے غیر ضروری باہر نہ نکلیں۔