کورونا وائرس نیب کی زیر حراست تمام ملزمان کی اسکریننگ کرانے کا فیصلہ

March 25, 2020 12:05 pm0 commentsViews: 4

نیب ہیڈ کوارٹرز میں اعلیٰ سطح کا اجلاس، اوقات کار 9 سے 2بجے ، افسران ‘اہلکاروں کی دفتر حاضری 50فیصد کم کرنیکا فیصلہ
عدالتوں میں نیب کے مقدمات میں پراسیکیوٹرز کی حاضری یقینی بنائی جائے گی،جسٹس جاوید اقبال کا اجلاس سے خطاب
اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) نیب کے تمام دفاتر میں اوقات میں کمی کردی گئی جبکہ نیب کی زیر حراست تمام ملزمان کی سکریننگ کرانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔تفصیلات کے مطابق چیئرمین نیب جاوید اقبال کی زیر صدارت اعلی سطح کا اجلاس ہوا، اجلاس میں تمام نیب افسران نے 3 سے 4 فٹ کا فاصلہ رکھا۔نیب اعلامیہ کے مطابق اجلاس کے دوران لاک ڈاون پابندی کے ساتھ عدالتوں میں پراسیکیوٹرز کی حاضری یقینی بنانے کا فیصلہ کیا گیا، پراسیکیوٹرز کی حاضری یقینی بنانے کا مقصد مقدمات کی عدم پیروی پر خارج سے بچانا ہے۔اعلامیہ کے مطابق نیب کے تمام دفاتر میں اوقات میں کمی کردی گئی، دفاتر صبح 9 بجے سے دن 2 بجے تک کھلیں گے، نیب ڈائریکٹر جنرلز اپنے افسران اور اہلکاروں میں 50 فیصد کمی کریں گے، بلڈ پریشر اور شوگر والے 50 سال سے زائد عمر کے افسران کو صرف ضروری کام کے لئے بلایا جائے گا۔نیب اعلامیہ کے مطابق نیب کی زیر حراست تمام ملزمان کی سکریننگ کرانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔اجلاس کے دوران خطاب کرتے ہوئے چیئر مین نیب جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ کروناوائرس سے ڈرنا نہیں بلکہ لڑنا ہے، کرونا وائرس سے تحفظ صرف احتیاط سے ہی ممکن ہے، تمام نیب اہلکار کرونا کی علامات ظاہر ہونے پر فوری اپنے ڈی جی کو بتائیں، ملزمان کے لئے گلوز، ماسک اور سینیٹائزر کا بھی انتظام کیا جائے گا۔