ملک بھر میں شدید بارشیں‘ ایک درجن افراد ہلاک ساڑھے تین لاکھ سے زائد متاثر

July 24, 2015 5:14 pm0 commentsViews: 16

آج بھی کراچی سمیت سندھ اور بلوچستان میں بارش کا امکان‘ سکھر بیراج سے رات کو بڑا سیلابی ریلہ گزرے گا
گلگت‘ بلتستان اور چترال میں کئی رابطہ پل بہہ گئے‘ متاثرہ علاقوں میں پاک فوج کی امدادی سرگرمیاں جاری
لاہور‘ چترال‘ کراچی‘ کوئٹہ( نیوز ڈیسک) ملک کے مختلف علاقوں میں بارشوں اور سیلاب سے تباہ کاریاں جاری ہیں‘ مزید سینکڑوں بستیاں زیر آب آنے سے درجنوں کچے مکانات بہہ گئے اور ہزاروں ایکڑ فصلیں تباہ جبکہ زمینی رابطے منقطع ہوگئے‘ قدرتی آفات سے نمٹنے کے قومی ادارے کا کہنا ہے کہ ملک میں بارشوں اور سیلاب سے ایک درجن سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ متاثرین کی تعداد ساڑھے تین لاکھ سے تجاوز کرگئی ہے جبکہ محکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ کراچی میںآج بھی بارش کا امکان ہے جبکہ شام کے وقت سندھ اور بلوچستان کے مختلف علاقوں میں موسلا دھار بارش ہوسکتی ہے‘ محکمہ موسمیات بلوچستان نے فلڈ وارننگ جاری کردی ہے‘ کراچی اور حیدر آباد میں بھی سیلاب کا خدشہ ہے‘ دریائے سندھ میں سکھر بیراج سے بڑا سیلابی ریلہ رات کسی وقت گزرے گا جس کے پیش نظر بیراج کے53 دروازے کھول دیئے گئے ہیں‘ این ڈی ایم اے کے ترجمان احمد کمال نے ایک غیر ملکی نشریاتی ادارے کو بتایا کہ بالائی چترال میں تقریباً دو لاکھ افراد متاثر ہوئے ہیں جبکہ گرم چشمہ میں متاثرین کی تعداد 60ہزار اور وادی کیلاش میں25 ہزار ہے اور اگر فوری طور پر رابطہ سڑکوں کو بحال نہیں کیا گیا تو حالات مزید خراب ہوسکتے ہیں‘ گلگت بلتستان اور چترال میں کئی رابطہ پل بہہ گئے ہیں تاہم متاثرہ علاقوں میں پاک فوج کی امدادی سرگرمیاں جاری ہیں‘ پنجاب سے5سے6 لاکھ کیوسک پانی کی آمد متوقع ہے‘ اس وقت 4سے ساڑھے چار لاکھ کیوسک پانی رواں دواں ہے‘ بقول صوبائی وزیر کے گڈو سے اگر6لاکھ کیوسک پانی کی آمد ہوتی ہے تو سکھر بیراج تک پہنچتے پہنچتے یہ مقدار ساڑھے 5لاکھ کیوسک رہ جائیگی جو 2010ء کے سیلاع کے مقابلے میں50 فیصد کم ہے‘ دریائے سندھ میں پانی کی سطح میں تیزی سے اضافے سے کچے کے علاقے میں روہڑی چھوٹی کھڈہری‘ اقبال بھارو‘ نائب خان دھاریجو‘ محمد بخش برڑو‘ عبدالفتاح جتوئی‘ لکھمیر‘ بھارو سمیت کئی دیہات زیر آب آگئے‘ پانی آنے کے باعث لوگوں کی بڑی تعداد نکل مانی پر مجبور ہوگئی ہے۔

Tags: