سندھ ہائی کورٹ: حلقہ بندیوں سے متعلق نوٹیفکیشن کالعدم قرار

November 18, 2015 5:27 pm0 commentsViews: 12

الیکشن کمیشن کو 24 گھنٹے میں حلقہ بندیوں کے حوالے سے نیا نوٹیفکیشن جاری کرنے کا حکم
کالعدم نوٹیفکیشن میں شہری علاقے دیہی اور دیہی علاقے شہری علاقوں میں شامل کئے گئے تھے
کراچی( اسٹاف رپورٹر) سندھ ہائی کورٹ نے شہری علاقوں کو دیہی اور ریہی علاقوں کو شہری علاقوں میں شامل کرنے کا نوٹیفکیشن کالعدم قرار دیدیا۔ فاضل عدالت نے حکم دیا ہے کہ الیکشن کمیشن حلقہ بندیوں کے حوالے سے24 گھنٹے کے اندر نیا نوٹیفکیشن جاری کرے تاہم حلقہ بندیوں کی تشکیل عدالت کے گزشتہ فیصلے کی رو سے کی جائے۔ حلقہ بندیوں کی تبدیلی سے19 نومبر کے انتخابات پر کوئی اثر نہیں پڑنا چاہئے۔ منگل کو جسٹس عرفان سعادت خان کی سربراہی میں 2 رکنی بنچ نے بلدیاتی حلقہ بندیوں سے متعلق ایم کیو ایم، پاکستان مسلم لیگ (ن) ، پی ایم ایل ( فنکشنل) اور سندھ یونائیٹڈ پارٹی و دیگر کی جانب سے دائر درخواستوں کی سماعت کی، درخواست گزاروں نے اپنے وکلاء کے توسط سے موقف اختیار کیا تھا کہ18 اکتوبر کو عدالت عالیہ کے فیصلے کے خلاف نئی حلقہ بندیاں کی گئیں اور شہری و دیہی کا فرق ختم کر دیا گیا ہے۔ ٹنڈو آدم، حیدر آباد، اور قاسم آباد جیسے علاقے اس حلقہ بندی میں زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔ یہ صورتحال سندھ ہائی کورٹ کے18 ستمبر کے فیصلے سے متصادم ہے۔

Tags: