بلدیہ کی پلاسٹک فیکٹری میں خوفناک آتشزدگی ، کروڑوں کا نقصان،3فائر مین بے ہوش

May 2, 2016 6:39 pm0 commentsViews: 30

اچانک بھڑک اٹھنے والی آگ نے تین منزلہ عمارت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا، اطلاع کے باوجود فائر بریگیڈ تاخیر سے پہنچی
شہر بھر سے فائر ٹینڈر طلب ،9گھنٹے بعد آگ پر قابو پالیا گیا، فیکٹری مالک کا فائر بریگیڈ کی لاپرواہی کیخلاف شدید احتجاج
کراچی(کرائم رپورٹر)بلدیہ ٹان میں قائم پلاسٹک کی فیکٹری میں آگ لگنے سے کروڑوں روپے مالیت کا سامان اور مشینیں جل گئیں ،فائربریگیڈ حکام نے آگ کو تیسرے درجہ کی قرار دیتے ہوئے شہر بھر سے فائر ٹینڈر طلب کرلیے ،9گھنٹے کی سخت جدوجہد کے بعد آگ پر قابو پالیا گیا ،آگ بجھانے کی کوشش میں3فائر مین بے ہوش ہو گئے ،دوسری جانب فیکٹری مالک نے فائر بریگیڈ کی غفلت ولاپروائی پر شدید احتجاج کیا ۔تفصیلات کے مطابق بلدیہ ٹائون کے علاقے نمبر3رشید آباد پلاٹ نمبر F-98پر قائم پلاسٹک کا سامان بنانے والی فیکٹری میں اتوار کی علی الصبح 4بجے کے قریب اچانک آگ بھڑک اٹھی جس کے دھوئیں اور شعلوں سے علاقے میں شدید خوف و ہراس پھیل گیا ،فیکٹری انتظامیہ نے واقعے کی فوری اطلاع فائر بریگیڈ کو دی تاہم آدھے گھنٹہ تاخیر سے صرف2فائر ٹینڈر موقع پر پہنچے اور آگ پر قابو پانے کی کوشش شروع کردی تاہم پلاسٹک کا سامان موجود ہونے کی وجہ سے آگ قابو سے باہر ہو گئی اور تین منزلہ فیکٹری کو لپیٹ میں لے لیا ،فائر بریگیڈ کے عملے نے صورتحال کو دیکھتے ہو ئے فوری طور پر اس کو تیسرے درجے کی آگ قرار دیتے ہو ئے شہر بھر سے فائر ٹینڈر طلب کر لیے ،ترجمان نے بتایا کہ آگ بھڑکنے کی اطلاع پر شہر بھر سے19فائر ٹینڈر اور3بازر موقع پر بھیجے گئے جنہوں نے9گھنٹے کی سخت جدوجہد کے بعد تقریبا ایک بجے آگ پر قابو پالیا ،ترجمان نے مزید بتایا کہ آگ بجھانے کی کوشش میں3فائر مین بے ہو ش ہو ئے تھے جن میں سے ایک فائر مین جاوید خان کو اسپتال منتقل کیا گیا جہاں پر اس کی حالت خطرے سے باہر بتائی گئی ہے ،انہوں نے کہا کہ آگ لگنے سے فیکٹری میں موجود کروڑوں روپے مالیت کا سامان مشینیں جل کر تباہ ہو گئیں اور آگ لگنے کی وجہ گرمی کی اضافی شدت بتائی گئی ہے جبکہ آگ پہلی منزل پر لگی تھی اور اس نے باقی منزلوں کو بھی اپنی لپیٹ میN لے لیا تھا ،دوسری جانب فیکٹری کے مالک نے فائر بریگیڈ حکام کی غفلت و لاپروائی پر شدید احتجاج کرتے ہو ئے کہا کہ آگ کی بروقت اطلاع دی گئی تھی تاہم گاڑیاں تاخیر سے پہنچیں جبکہ دیگر گاڑیاں بھی ایک گھنٹہ تاخیر سے پہنچیں جس کی وجہ سے اتنا بڑا مالی نقصان اٹھا نا پڑا ۔

لیاری کے مکینوں نے منشیات اور جوئے کے 6اڈے جلادیئے
گینگ وار ملزمان کی فائرنگ اور دکانداروں پر تشدد کیخلاف علاقہ مکینوں کی بڑی تعداد سڑکوں پر آگئی
رینجرز کی جانب سے علاقہ مکینوں کے اقدام کی تحسین،موبائلوں میں سوار کراکے علاقے میں گشت کروایا
کراچی( کرائم رپورٹر) لیاری میں گینگ وار کے ملزمان کی فائرنگ اور دکانداروں پر تشدد کیخلاف مکینوں کا ملزمان پر جوابی حملہ ‘علاقہ مکینوں نے 6 سے زائد منشیات اور جوئے کے اڈے مسمار کرکے آگ لگادی۔ چاکیواڑہ تھانے کی حدود لیاری ‘سنگو لین‘ سربازی محلہ‘ عمر لائن‘ سعید آباد وچھانی محلہ سمیت دیگر علاقوں میں لیاری کی مسجد کمیٹی اور مشتعل مکینوں کی بڑی تعداد نے اپنی مدد آپ کے تحت عذیر کا جوا خانہ‘ سہیل کا چرس کا اڈا اور سربازی محلے میں محمد کچھی کے منشیات کے اڈے سمیت دیگر اڈوں کو مسمار کرکے آگ لگادی۔ اطلاع ملنے پر رینجرز کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی جس کے بعد رینجر نے علاقہ مکینوں کے اس اقدام کو سراہتے ہوئے انہیں نہ صرف اپنی موبائل میں سوار کرکے علاقے میں فلیگ مارچ کرایا بلکہ مکینوں کی حوصلہ افزائی کیلئے ان کے حق میں نعرے بھی لگائے‘ ذرائع نے بتایا کہ گزشتہ روز گینگ وار عذیر بلوچ گروپ سے تعلق رکھنے والے اسماعیل عرف شر‘ باسط عرف موت‘ رضوان عرف ہیرو‘ عزیز اور غفار موٹا سمیت2درجن سے زائد کارندے علاقے کے دکانداروں اور دیگر کاروبار کرنیوالوں سے بھتہ وصولی کیلئے نکلے ہوئے تھے اس دوران چاکیواڑہ تھانے کی حدود میراں ناکہ مرغی خانہ والی گلی میں گینگ وار کے کارندے واسلا نے ایک دکاندار کو تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔

آج صبح طارق روڈ پر رہائشی عمارت میں آگ بھڑک اٹھی‘ کوئی جانی نقصان نہیں ہوا
کراچی( کرائم رپورٹر) آج صبح فیروز آباد تھانے کی حدود طارق روڈ ‘خالد بن ولید روڈ پر واقع رہائشی عمارت میں اچانک آگ بھڑک اٹھی جس کی اطلاع فائربریگیڈ حکام کو دی گئی۔ فائر بریگیڈ حکام کو اطلاع ملتے ہی فائر بریگیڈ کا عملہ موقع پر پہنچ گیا اور آگ بجھانے کا عمل شروع کیا آدھے گھنٹے میں مکمل آگ پر قابو پالیا اور کولنگ کا عمل شروع کردیا فائر بریگیڈ نے بتایا کہ فائر بریگیڈ کی2 گاڑیوں نے مذکورہ آگ بجھانے میں حصہ لیا اور آگ پر آدھے گھنٹے میں قابو پالیا گیا۔ پولیس نے بتایا کہ آگ لگنے کی وجوہات معلوم نہیںہوسکی ہیں اور آگ لگنے سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا جبکہ گھر کا سامان جل کر خاکستر ہوگیا۔