حکومت کا رانا ثنااللہ کیخلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج کرنے کا فیصلہ

April 17, 2021 2:24 pm0 commentsViews: 6

راولپنڈی: وزیراطلاعات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ لیگی رہنما رانا ثنااللہ نے سرکاری افسران کو دھمکیاں دیں، حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ ان کے بیان پر ان کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج کیا جائے گا۔ نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق ڈی ایچ کیو راولپنڈی کے دورے کے موقع پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیراطلاعات فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ اللہ کا شکر ہے کہ اس وقت حالات بہتر اور قابو میں ہیں، رسول اللہﷺ سے محبت ہمارے ایمان کا جزو ہے، لیکن ان کی ذات پر سیاست کرنا درست نہیں، اور حضورﷺ کی ذات کو اپنے ذاتی مفادات کے لئے استعمال کرنا تو قطعی غلط ہے، ماضی میں ہم نے فرقہ وارانہ فسادات دیکھے اور جب ان پر تحقیق کی تو پتہ چلا کہ ایسی جماعتوں کو بھارتی ایجنسی را کا تعاون حاصل تھا، اس میں دو رائے نہیں کہ ہمارے لوگ نہ چاہتے ہوئے بھی دشمن ملک کے ہاتھوں استعمال ہوجاتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ ایسے فتنے جن سے ملک کمزور ہو، دنیا میں ملکی ساکھ متاثر ہو ان کو اجازت نہیں دی جاسکتی کہ وہ جو چاہیں کرتے رہیں، حکومت پاکستان اپنے قانون نافذ کرنے والے اداروں خصوصاً چاروں صوبوں کی پولیس کو مبارکباد پیش کرتی ہے جنہوں نے اس فتنے کو ناکام بنایا۔ پاکستان دنیا کا پانچویں بڑا اور ایٹمی طاقت والا ملک ہے، دنیا کی سپر پاور امریکا افغانستان میں فتح یاب نہ ہوسکی لیکن پاکستان نے ایسے عناصر کو شکست دی جن کے خلاف امریکا نبرد آزما تھا، پاکستان کی ریاست بالکل کمزور نہیں، اگر کسی کو کوئی شک ہے تو وہ دور کرلے، ہمارے ملک میں جمہوریت ہے اور مختلف نقطہ نظر والوں کے مؤقف کو سنا جاتا ہے اسی کو جمہوریت کہتے ہیں، لیکن کوئی یہ سمجھے کہ ہم حکومت کو بلیک میل کرلیں گے یا حکومت کو طاقت کے زور پر زیر کریں گے تو اپنی غلط فہمی دور کرلے۔

وزیر اطلاعات نے کہا کہ مذہبی جماعت کے خلاف کارروائی اور اسے کالعدم قرار دینے کا فیصلہ کسی ملک یا بین الاقوامی طاقت کے زور، ڈر یا دباؤ پر نہیں کیا، بلکہ یہ فیصلہ ہماری اپنی حکومت کا تھا، اس فیصلے میں سب سے پہلے وزارت داخلہ، اس کے بعد ہرصوبے کی حکومت نے مل کر ایکشن لیا، اور ثابت کیا کہ ریاست کی رٹ کو چیلنج نہیں کیا جاسکتا۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا ثنااللہ نے گزشتہ روز ایک بیان دیا جس میں انہوں نے چیف سیکرٹری پنجاب، کمشنر اور دیگر افسران کو وہی کہا جو چند روز سے ایک انتہاپسند جماعت کہہ رہی تھی، جو زبان رانا ثنااللہ نے استعمال کی وہی بانی ایم کیوایم نے استعمال کی تھی، اور آج دونوں کہاں ہیں سب جانتے ہیں، حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ رانا ثنااللہ کے خلاف دہشتگردی کا مقدمہ درج کیا جائے گا، اور ان کے خلاف کارروائی ہوگی، کسی کو اجازت نہیں دی جاسکتی کہ وہ ہمارے سرکاری افسران یا ان کے اہل خانہ کو دھمکیاں دے۔

وزیر اطلاعات کا مزید کہنا تھا کہ جس نے پاکستان میں سیاست کرنی ہے وہ آئین کی حدود میں رہ کر سیاست کرے، بانی ایم کیو ایم بننے کی کوشش نہ کی جائے، اگر اداروں کے خلاف بولیں گے یا ان کی ساکھ خراب کرنے یا انہیں بلیک میل کرنے کی کوشش کریں گے تو آپ کو کارروائی کا سامنا کرنا پڑے گا۔