بارش کے بعد کے الیکٹرک کے 178 فیڈر ٹرپ کرگئے شہر کے کئی علاقوں کی بجلی بند

July 22, 2015 3:52 pm0 commentsViews: 18

شہر میں منگل کی شب تیز ہوائوں کے ساتھ بارش کے دوران شاہرائوں پر لگے سائن بورڈ گرگئے‘ سڑکوں میں پھسلن سے متعدد موٹر سائیکل سوار زخمی
اندرون سندھ تیز بارش سے نشیبی علاقے زیر آب آسکتے ہیں جس سے دریائے سندھ میں طغیانی کا خطرہ ہے‘ محکمہ موسمیات نے وارننگ جاری کردی
کراچی( اسٹاف رپورٹر) کراچی میں منگل اور بدھ کی درمیانی شب شہر میں تیز ہوائوں اور گرج چمک کے ساتھ شدید بارش سے موسم خوشگوار ہوگیا ہے۔ کے الیکٹر ک کے 178 فیڈرز ٹرپ کر گئے۔ کئی علاقوں میں بجلی کے تار ٹوٹنے کے باعث بجلی منقطع ہوگئی۔ محکمہ موسمیات نے بدھ سے کراچی میں مون سون بارشوں کی پیش گوئی کی ہے۔ طوفانی ہوائوں سے شہر کی بڑی شاہراہوں پر لگے سائن بورڈ گر گئے ہیں۔ سڑکوں پر پھسلن سے کئی موٹر سائیکل سوار حادثے کا شکار ہوگئے۔ طوفانی اور گرد آلود ہوائوں سے حد نظر باقی نہ رہا جس کے سبب سینکڑوں گاڑیاں آپس میں ٹکرا گئیں۔ شدید بارش سے مختلف علاقوں میں بجلی کی تاریں گرنے اور پی ایم ٹی اڑنے کی وجہ سے بجلی غائب ہوگئی۔ اور بیشتر علاقوں میں کے الیکٹرک نے بارش کا بہانہ بناتے ہوئے بجلی غائب کر دی ہے۔ بارش سے ہونے والے حادثات اور خطرات کے پیش نظر شہر بھر کی شاہراہوں سے ہنگامی طور پر 200 سے زائد سائن بورڈ پہلے ہی ہٹا دئیے گئے تھے۔ جبکہ بقیہ سائن بورڈ ہٹانے کا کام تیزی سے جاری ہے۔ شہری انتظامیہ کی جانب سے بارش سے ہونے والے نقصانات سے بچنے کیلئے ہنگامی اقدمات کر لئے گئے ہیں۔ محکمہ موسمیات نے کہا ہے کہ اندرون سندھ تیز بارش سے نشیبی علاقے زیر آب آسکتے ہیں جس سے دریائے سندھ میں طغیانی کا خطرہ ہے۔ کراچی میں منگل کی شب اچانک شہر کے مختلف علاقوں جس میں کورنگی صنعتی ایریا، بہادر آباد، گلشن اقبال، ملیر، کورنگی، گلستان جوہر، لیاقت آباد، نارتھ ناظم آباد، نیو کراچی، ڈیفنس، کلفٹن، گارڈن سمیت مختلف علاقوں میں اچانک تیز ہوائوں کے ساتھ بارش شروع ہوگئی اور بعض علاقوں میں انتہائی تیز بارش سے معمولات زندگی معطل ہونے والے علاقوں میں بجلی کی فراہمی بھی معطل ہوگئی جس کی وجہ سے علاقے اندھیرے میں ڈوب گئے۔ علاوہ ازیں سندھ کے شہروں عمر کوٹ، ٹنڈو الہ یار، تھر پار کر، ٹنڈو باگو اور کراچی کے قریب بلوچستان کے شہروں حب، بیلہ، اوتھل اور وندر میں بھی موسلا دھار بارش ہوئی جس سے موسم خوشگوار ہوگیا۔

Tags: