دودھ بڑھانے کیلئے جانوروں کو خطرناک انجکشن لگانے کا انکشاف

July 24, 2015 5:03 pm0 commentsViews: 218

شہر میں فی ٹیکہ800 روپے میں فروخت کیا جا رہا ہے، جس کے اثرات انسانی صحت کیلئے انتہائی مضر ہیں
انجکشن زدہ دودھ کے استعمال سے آنتوں کی سوزش، ٹی بی، ہیپا ٹائٹس اور کینسر جیسے مرض پھیل رہے ہیں
کراچی( کامرس رپورٹر) شہر کو دودھ کی فراہمی میں اضافے کے لئے باڑا مالکان اور جانوروں کے ڈاکٹروں نے اسمگل شدہ خطرک انجکشنوں کا استعمال شروع کر دیا۔ جانوروں کے ڈاکٹر فی ٹیکہ800 روپے میں فروخت کر رہے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق کراچی کی بڑھتی ہوئی دودھ کی طلب کا فائدہ اٹھاتے ہوئے لائیو اسٹاک ڈپارٹمنٹ فوڈ ڈپارٹمنٹ اور ڈسٹرکٹ افسران کی ملی بھگت سے دنیا بھر میں ممنوع بوسٹن اور سامائک نامی ہارمونل انجکشن بھینسوں کو لگا کر دودھ کی دگنا مقدار حاصل کر رہے ہیں۔ طبی ماہرین نے دودھ میں انجکشن کے اثرات کو انسانی صحت کیلئے انتہائی خطرناک قرار دیا ہے بچوں، خواتین اور مردوں میں انجکشن زدہ دودھ کے استعمال سے آنتوں میں سوزش، پیچش ، ٹی بی، دست، ہیپا ٹائٹس اور کینسر جیسے موذی امراض پھیل رہے ہیں۔ جبکہ بلدیہ کا فوڈ ڈپارٹمنٹ اور دیگر ادارے اس مکروہ کاروبار سے بے نیاز مٹھی گرم کرنے میں مصروف ہیں۔

Tags: