متوقع سیلاب سندھ میں مخدوش 100 سرکاری عمارتیں منہدم ہونے کا خطرہ

July 25, 2015 12:45 pm0 commentsViews: 36

صوبے کے 6 اضلاع میں واقع مخدوش عمارتوں میں مختلف انتظامی محکموں کے دفاتر قائم ہیں‘ چیف سیکریٹری کی زیر صدارت اجلاس
سینکڑوں سرکاری اسکولوں کی عمارتیں بھی مخدوش ہوچکی ہیں‘ محکمہ ورکس اینڈ انجینئرنگ کو مرمت کیلئے فوری اقدامات کرنے کی ہدایت
کراچی( نیوز ڈیسک) سندھ میں متوقع سیلاب اور طوفانی بارشوں سے نہ صرف جانی و مالی نقصان کا خطرہ موجود ہے بلکہ اس صورتحال میں ایک سو سے زائد مخدوش اور خستہ حال سرکاری عمارتوں کے منہدم ہونے کا بھی خطرہ پیدا ہوگیا ہے جس کی نشاندہی چیف سیکریٹری سندھ محمد صدیق میمن کی زیر صدارت ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کے دوران متعلقہ سرکاری حکام کی جانب سے کی گئی ہے اجلاس میں سیلاب اور طوفانی بارشوں سے بچائو کے اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔ متعلقہ سرکاری حکام نے اجلاس کو بتایا کہ جن سرکاری عمارتوں کے گرنے کا خطرہ ہے وہاں موجود انتظامی محکموں کے دفاتر قائم ہیں اور یہ عمارتیں سندھ کے ان6 اضلاع میں واقع ہیں جن کے متوقع سیلاب سے متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔ ذرائع کے مطابق چیف سیکریٹری سندھ نے اس صورتحال کا سختی سے نوٹس لیتے ہوئے محکمہ ورکس اور انجینئرنگ کو ہدایت کی کہ مخدوش سرکاری عمارتوں کا فوری سروے کرکے ان کی مرمت اور دیکھ بھال کے لئے ہنگامی طور پر اقدامات کئے جائیں، اجلاس کو یہ بھی بتایا گیا کہ سندھ کے مختلف اضلاع میں سینکڑوں کی تعداد میں ایسے سرکاری اسکول بھی ہیں جن کی عمارتیں انتہائی مخدوش ہو چکی ہیں۔

Tags: