شہر میں خلاف ضابطہ تعمیرات کی بھرمار‘ ٹائونز ڈائریکٹرز نے ٹھیکیداروں سے مک مکا کرلیا

July 27, 2015 5:01 pm0 commentsViews: 22

گلبرگ زون‘ لیاقت آباد‘ نارتھ کراچی‘ ناظم آباد‘ صدر اور دیگر علاقوں میں غیر قانونی تعمیرات پر سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی خاموش
پرانی عمارتوں پر اضافی فلورز بنائے جارہے ہیں‘ رہائشی بنگلوں پر بھی شادی ہالز کی تعمیرات‘ حکومتی خزانے کو بھی اربوں روپے کا نقصان
کراچی( سٹی رپورٹر) سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کا ڈیمالیشن اسکواڈ غائب، شہر میں خلاف ضابطہ تعمیرات کی بھرمار، ٹائون کے ڈائریکٹرز نے ٹھیکیدار مافیا کے ساتھ مک مکا کرکے لوٹ مچادی، رہائشی علاقوں کا انفرااسٹرکچر خطرے میں پڑ گیا، رہائشی بنگلوں پر شادی ہالز کی تعمیرات ، حکومتی خزانے کو اربوں روپے کا نقصان، پورسن اور فلیٹ ٹائپ کنٹرکشن کے ساتھ ساتھ منہدم عمارتوں پر تعمیرات اور پرانی عمارتوں پر تیزی سے اضافی فلورز تعمیر کئے جانے لگے، شہریوں میں سخت تشویش پھیل گئی۔ تفصیلات کے مطابق شہر کے مختلف بالخصوص گلبرگ زون،لیاقت آباد زون، نارتھ کراچی، نارتھ ناظم آباد، جمشید ٹائون، صدر و دیگر علاقوں میں بڑے پیمانے پر غیر قانونی اور خلاف ضابطہ تعمیرات کا سلسلہ زور پکڑ گیا ہے جبکہ سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے اعلیٰ افسران نے مذکورہ خلاف ضابطہ تعمیرات کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے پراسرار خاموشی اختیا ر کر رکھی ہے۔ ذرائع کے مطابق سب سے زیادہ خلاف ضابطہ تعمیرات رہائشی علاقوں میں کی جارہی ہیں جہاں رہائشی پلاٹوں پر غیر قانونی طور پر فلیٹ ٹائپ کنٹرکشن اور پورشن تعمیر کرکے فروخت کرنے کا سلسلہ ایک مرتبہ پھر عروج پر پہنچ چکا ہے۔ رہائشی بنگلوں پر افسران کی مبینہ سرپرستی میں شادی ہال بھی تعمیر کئے جارہے ہیں جبکہ دیگر کمرشل سرگرمیاں رہائشی بنگلوں پر جاری ہیں جس سے حکومت کو اربوں روپے کا نقصان اٹھانا پڑرہا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ایس بی سی اے کے قائمقام ڈائریکٹر جنرل ممتاز حیدر شہر میں غیر قانونی تعمیرات کو رکوانے میں مکمل طور پر ناکام ہوکر رہ گئے ہیں جس کے باعث شہر کا انفرااسٹرکچر تباہی کے دہانے پر پہنچ چکا ہے۔

Tags: