زبردستی ودہولڈنگ ٹیکس وصول کیا گیا تومعیشت کا پہیہ جام کردینگے، ادریس میمن

July 27, 2015 5:04 pm0 commentsViews: 24

حکومت سمیت ان تمام نام نہاد تاجررہنمائوں کی بھرپور مذمت کرتے ہیں جو 3فیصد ٹیکس کی حمایت کررہے ہیں
عائد ٹیکس واپس نہ لیا گیا تو دھرنوں اور شٹرڈائون سمیت احتجاج کا ہر طریقہ اختیار کیاجائے گا
کراچی (کامرس رپورٹر) ملک بھر کے الیکٹرونکس ڈیلرز سمیت تمام چھوٹے تاجر حکومت کی جانب سے 50 ہزار روپے اور اس کے زائد مالیت کے چیکس پر3 فیصد ٹیکس مسترد کرچکے ہیں، اگر حکومت کی جانب سے زبردستی یہ ٹیکس وصول کرنے کی کوشش کی گئی تو ملک بھر میں معیشت کا پہیہ جام کردیں گے، یہ بات کراچی الیکٹرونکس ڈیلرز ایسوسی ایشن کے سابق صدر اور معروف تاجر رہنما محمد ادریس میمن نے الیکٹرونکس ڈیلرز اور چھوٹے تاجروں کے ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی، جو بینکنگ سیکٹر میں لگائے جانے والے ٹیکس پر ردعمل کے لیے طلب کیا گیا تھا، ادریس میمن نے کہا کہ ہم حکومت سمیت ان تمام نام نہاد تاجر رہنمائوں کی بھرپور مذمت کرتے ہیں جوکہ بینکوں سے چیک کیش کرانے پر 3 فیصد ٹیکس کی حمایت کررہے ہیں، ہم ایسا کوئی ظالمانہ ٹیکس برداشت نہیں کریں گے، اور جو تاجر رہنما حکومت کے اعلیٰ کار کن کر اس ٹیکس کی حمایت کررہے ہیں، ان کی اینٹ سے اینٹ بجادیں گے، ادریس میمن نے کہا کہ اس مسئلے پر ملک بھر کی تاجر برادری اور خصوصاً چھوٹے تاجر ایک پلیٹ فارم پر ہیں، اگر حکومت نے فوری طور پر بینک سے چیک کیش کرانے پر عائد ٹیکس واپس لینے کا اعلان نہ کیا تو احتجاجی مظاہروں ، دھرنوں اور شٹرڈائون سمیت احتجاج کا ہر طریقہ اختیار کیا جائے گا۔ اور تاجر اپنے بھرپور احتجاج کے ذریعے حکومت کو یہ ٹیکس واپس لینے پر مجبور کردیں گے۔ ادریس میمن نے کہا کہ ایسے وقت میں حکومت تاجر برادری کو بجلی، گیس اور دیگر سہولیات فراہم نہیں کررہی ہے، تاجر برادری بے سروسامانی میں کاروبار کررہی ہے، اور حکومت تاجروں کو سہولیات فراہم کرنے کے بجائے بیورو کریسی کے ایما پر تاجر دشمن اقدامات کرکے تاجر دشمن فیصلے کررہی ہے۔

Tags: