صفورا ندی پر واقع ڈیم سے پانی کا رسائو شروع سعدی ٹائون‘گڈاپ ٹائون اور اطراف کے علاقے ڈوبنے کا خطرہ

July 28, 2015 2:38 pm0 commentsViews: 46

تین سال قبل بھی بلوچستان کے پہاڑی سلسلے سے آنے والے برساتی پانی کے ریلے نے ان آبادیوں میں تباہی مچادی تھی
شہر میں شدید بارشیں ہوئیں تو لٹھ ڈیم ٹوٹنے کا خدشہ ہے‘ انتظامیہ کی جانب سے کوئی اقدامات نہیں کئے گئے
کراچی(سٹی رپورٹر)کراچی میں بارشوں سے بڑی تباہی کے خدشات لٹھ ڈیم سے پانی کا رسائو شروع ہوگیاصفورا ندی پر واقع لٹھ ڈیم کے ایک بار پھر ٹوٹنے کا خدشہ حکومت سندھ کی غفلت اور لاپرواہی سے سپر ہائی وے سے ملحقہ سعدی ٹائون گڈاپ ٹائون سمیت ارگرد کے علاقوں کا ایک بار پھر ڈوبنے کاخطرہ،حکومت سندھ کے محکمہ ڈیزاسٹر مینجمنٹ کی غفلت کے باعث اگست2013 میںلٹھ ڈیم ٹوٹنے سے سعدی ٹائون گڈاپ ٹائون سمیت کئی علاقے پانی میں ڈوب گئے تھے جس کی وجہ سے کئی علاقہ مکین اپنی قیمتی جانوں اور گھر بار سے بھی محروم ہو گئے تھے جبکہ علاقہ مکینوں نے کئی روز گھروں کی چھتوں پر گذارے تھے تفصیلات کے مطابق اگست 2013میں بلوچستان کے پہاڑی سلسلے سے آنے والے برساتی پانی کے ریلے کی وجہ سے بلوچستان اور سندھ کے سنگم صفورا ندی پر واقع لٹھ ڈیم کا حفاظتی بند ٹوٹ گیا تھا جس کی وجہ سے سعدی ٹائون بھٹائی آباداور گڈاپ ٹائون سمیت کئی علاقے مکمل طور پر پانی میں ڈوب گئے تھے ۔اس دلخراش حادثہ کے باوجود حکومتی سطح پر نہ ہی بند کو مضبوط بنانے کے لئے کوئی اقدامات کیئے گئے اور نہ ہی کسی حادثہ کی صورت میں علاقہ مکینوں کی جان و مال کی حفاطت کے لئے کوئی ٹھوس انتظام کیا گیاحکومتی دعوے الفاظ کی جمع خرچ سے آگے نہ بڑھ سکے جبکہ شہر میں ہونے والی حالیہ مون سون کی بارشوں سے ڈیم کے مکمل طور پر پانی سے بھر جانے سے ایک بار پھر ڈیم سے پانی کا رسائو شروع ہو چکا ہے جس کی وجہ سے علاقہ مکین سخت خوف و ہراس میں مبتلا ہیںتاہم حکومت سندھ اور بلدیہ عظمیٰ کراچی کی جانب سے اس سلسلے میں تاحال کوئی پیش رفت نہیں کی گئی حکومت سند ھ کی جانب سے اس انتہائی سنگین صورتحال میں بھی روایتی لاپرواہی برقرار ہے واضح رہے کہ محکمہ موسمیات کی جانب سے شہر میں شدیدبارشوں کی پیش گوئی کے مطابق اگر شہر میں شدید بارشوں کا سلسلہ شروع ہو گیا توپانی کے دبائو سے ڈیم کے ٹوٹنے کا شدید خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے دوسری جانب علاقہ مکینوں نے گورنر سندھ وزیر اعلیٰ سندھ کمشنر وایڈمنسٹریٹر کراچی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فوری طور پر لٹھ ڈیم سے ہونے والے پانی کے رسائو کا نوٹس لے کر فوری طور پر ڈیم کے پشتوں کی مرمت اور کسی بھی خطرناک صورتحال میں علاقہ مکینوں کی جان ومال کی حفاظت کے لئیٹھوس اقدامات کرائیں۔

Tags: