تاجر برادری یکم اگست کو ملک گیر شٹر ڈائون ہڑتال کریگی‘آل پارٹیز کانفرنس

July 30, 2015 4:28 pm0 commentsViews: 21

حکومت نے بجلی کے بلوں میں اضافہ کے بعد ود ہولڈنگ ٹیکس کا اطلاق کرکے ظالمانہ اقدام کیا ہے‘ حافظ نعیم الرحمن
کے الیکٹرک کو دوبارہ قومی تحویل میں لے کر اس کے کرتا دھرتا ئوں کا احتساب کیا جائے‘ پریس کانفرنس میں مقررین کا مطالبہ
کراچی( اسٹاف رپورٹر) آل پارٹیز کانفرنس نے ود ہولڈنگ ٹیکس کے خلاف یکم اگست کو شٹر ڈائون ہڑتال کا اعلان کر دیا۔ امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے کہا ہے کہ کے الیکٹرک کے بلوں کے اضافے کے بعد حکومت کی جانب سے ود ہولڈنگ ٹیکس کا اطلا ق ظالمانہ اقدام ہے۔ شہر میں پانی کا مصنوعی بحران حکمرانوں کی نا اہلی ہے۔ کے الیکٹرک سمیت متحدہ اور پیپلز پارٹی کے کرپٹ لوگوں کا احتساب کیا جائے۔ تمام مسائل کے حل کے لئے فلاحی مملکت کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بدھ کو کراچی پریس کلب میں آل پاکستان آرگنائزیشن آف اسمال ٹریڈرز اینڈ کاٹیج انڈسٹری پاکستان کے تحت منعقدہ آل پارٹیز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ اسمال ٹریڈرز کے جنرل سیکریٹری محمود اعظم، محبوب عالم، پیپلز پارٹی کراچی ڈویژن کے صدر نجمی عالم، جمعیت علماء اسلام ف کے رہنما اسلم غوری، جمعیت علماء پاکستان کے رہنما صدیق راٹھور سمیت دیگر مذہبی و سیاسی رہنمائوں کے علاوہ تاجر برادری کے رہنما بھی موجود تھے۔ حافظ نعیم الرحمن کا کہنا تھا  کہ عوام پر بجلی کی لوڈ شیڈنگ اور پانی کا مصنوعی بحران کم تھا۔ جو ود ہولڈنگ ٹیکس لگا دیا گیا۔ وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار اگر پاکستان سے اتنے ہی مخلص ہیں تو اپنے بچوں کا کاروبار بھی اسی ملک میں کروائیں۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے رہنما پیپلز پارٹی نجمی عالم نے کہا ہے کہ ود ہولڈنگ ٹیکس ایک عام آدمی کے لئے کسی عذاب سے کم نہیں ہے پیپلز پارٹی عوام دشمن ظالمانہ ٹیکسوں کے خلاف ہر جگہ آواز بلند کرے گی۔ مقررین نے مطالبہ کیا کہ کے الیکٹرک کو دوبارہ قومی تحویل میں لے کر اس کے کرتا دھرتائوں کا احتساب کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ کئی کئی گھنٹوں کی لوڈ شیڈنگ کے بعد ہزاروں اور لاکھوں روپے کا بل بھیجنا کے الیکٹرک کی فرعونیت کی مثال ہے۔ یکم اگست کو ملک کی تاجر برادری ود ہولڈنگ ٹیکس کے خلاف شٹر ڈائون ہڑتال کرے گی اگر ود ہولڈنگ ٹیکس ختم نہ کیا گیا تو ہڑتالوں اور احتجاج کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع کریں گے۔

Tags: