تہران میں اہلسنت کی مسجد شہید کرنا قابل مذمت ہے، علامہ احمد لدھیانوی

August 3, 2015 5:29 pm0 commentsViews: 38

ایران میں یہودیوں سمیت ہر طبقے کی عبادت گاہیں ہیں مگر اہل سنت مسجد بنانے پر پابندی ہے
امریکہ سے معاہدہ دراصل ایران کو خطے میں کھلی جارحیت کا لائسنس دیتا ہے، علماء کرام سے گفتگو
لاہور( نیوز ایجنسیاں) اہلسنت و الجماعت کے سربراہ علامہ محمد احمد لدھیانوی نے کہا ہے کہ ایرانی حکومت کی جانب سے تہران میں اہلسنت کی مسجد کو شہید کرنے کی شدید مذمت کرتے ہیں۔ ایران میں مسلسل اہلسنت کے حقوق غصب کئے جا رہے ہیں مسلم ممالک میں انتشار اور فرقہ واریت میں بھی یہی پڑوسی ملک شامل ہے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مرکز اہلسنت میں علماء کرام سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہر مذہب کو اپنی عبادت کرنے کی مکمل آزادی اور اختیار ہوتا ہے۔ لیکن ایران میں تسلسل کے ساتھ اہلسنت کی پابندی ہے ایران میں یہودی، سکھ، عیسائی سمیت ہر طبقہ کی عبادت گاہیں موجود ہیں۔ لیکن اہلسنت کے لئے مساجد بنانے پر پابندی عائد کی ہوئی ہے جو نا قابل مذمت ہے۔ علامہ احمد لدھیانوی نے کہا کہ پاکستان، عراق، شام، بحرین، یمن سمیت ایران وسطی ایشیا میں مداخلت کر رہا ہے۔ پاکستان میں پائی جانے والی فرقہ واریت کے مکمل تانے بانے بھی ایران تک جاتے ہیں۔ جس کے سبب ہزاروں افراد قتل کئے جا چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ امریکا ایران معاہدہ در اصل ایران کو خطہ میں کھلی جارحیت کا لائسنس فراہم کرنا ہے۔ جس سے خطہ میں مزید انتشار کا خدشہ پایا جا رہا ہے۔

Tags: