شیر شاہ تھانے پر مجسٹریٹ کا چھاپہ لیاری کے 3 نوجوان بازیاب

August 3, 2015 5:31 pm0 commentsViews: 46

پولیس نے لیاری میں میمن سوسائٹی کے رہائشی نوجوانوں کو غیر قانونی حراست میں رکھا ہوا تھا اور رہائی کیلئے ایک لاکھ روپے فی کس رشوت مانگی تھی
نوجوان کو تمام رات چھت سے الٹا لٹکا کر رکھا گیا‘ ڈیوٹی افسر اور ایس ایچ او کو عدالت میں پیش ہونے کا حکم اے ایس آئی کو معطل کردیا گیا
کراچی( کرائم رپورٹر) شیر شاہ میں پولیس گردی تین نوجوانوں کو غیر قانونی طور پر تمام رات چھت پر لٹکا کر رکھا گیا۔ رہائی کے لئے فی کس ایک لاکھ روپے رشوت مانگی گئی تھی جوڈیشل مجسٹریٹ نے شیر شاہ تھانے پر چھاپہ مار کر لیاری میمن سوسائٹی کے رہائشی تین نوجوانوں کو بازیاب کرا لیا۔ ڈی آئی جی نے ایس پی سائٹ کو انکوائری کا حکم دے دیا۔ اے ایس آئی ظفر کو معطل کرکے عہدے سے تنزلی کر دی گئی۔ تفصیلات کے مطابق شیر شاہ پولیس نے جمعہ کے روز لیاری میمن سوسائٹی کھڈا مارکیٹ کے رہائشی جنریٹر کی دکان پر کام کرنے والے میمن نوجوان شاہد ولد عبدالکریم اور اسکے محلے کے دو دیگر نوجوانوں زاہد اور فیضان کو غیر قانونی طور پر حراست میں لیا تھا۔ رہائی کے لئے طلب کی گئی رقم نہ دینے پر تینوں نوجوانوں کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا اور تمام رات چھت پر الٹا لٹکا کر رکھا گیا۔ زیر حراست نوجوان شاہد کے عزیز نے اپنے وکیل کے ذریعے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج ویسٹ کو درخواست دی تھی۔ عدالت کے حکم پر جوڈیشل مجسٹریٹ ویسٹ صدر الدین نے شیر شاہ تھانے پر چھاپہ مار کر تھانے کے ایک کمرے سے تینوں نوجوانوں کو شدید زخمی حالت میں بازیاب کرا لیا ۔ تینوں نوجوانوں کی گرفتار ی تھانے میں کوئی ریکارڈ نہیں تھا اور نہ ان کے خلاف کوئی مقدمہ درج تھا مجسٹریٹ نے ڈیوٹی افسر پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے نوجوانوں کا میڈیکل چیک اپ کرانے کا حکم دیا جبکہ ڈیوٹی افسر اور ایس ایچ او کو ریکارڈ کے ہمراہ عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا ہے ڈی آئی جی ویسٹ نے صورتحال کا نوٹس لیتے ہوئے واقعہ کی انکوائری اور اس کے عہدے میں تنزلی بھی کر دی گئی۔

Tags: