پولیس اہلکاروں کا قتل رینجرز نے متحدہ سے 187 ٹارگٹ کلرز مانگ لئے

August 5, 2015 5:02 pm0 commentsViews: 37

مبینہ ٹارگٹ کلرز 90ء کی دہائی کے آپریشن میں شریک پولیس افسران و اہلکاروں کے قتل میں ملوث ہیں‘ فاروق ستار کو خط
رینجرز کا کوئی خط موصول نہیں ہوا‘ ایم کیو ایم کے 150 کارکن لاپتہ ہیں‘ ان کی بازیابی کیلئے مدد کی جائے‘ فاروق ستار
کراچی( کرائم رپورٹر/ مانیٹرنگ ڈیسک) رینجرز نے187 ٹارگٹ کلروں کی حوالگی کیلئے متحدہ کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار کو خط لکھ دیا۔ ملزمان 208 پولیس اہلکاروں کے قتل میں ملوث ہیں۔ رینجرز نے متحدہ قومی موومنٹ سے تعلق رکھنے والے 187 ٹارگٹ کلروں کی حوالگی کے لئے فاروق ستار کو خط لکھا ہے۔ نائن زیرو کے پتے پر بھجوائے گئے خط میں بتایا گیا ہے کہ ملزمان90 ء کی دہائی کے آپریشن کے شریک پولیس افسران و اہلکاروں کے قتل میں ملوث ہیں۔ رینجرز کے خط میں ملزمان کی فہرست بھی دی گئی ہے۔ ٹارگٹ کلرز1,1 پولیس اہلکار کے قتل میں ملوث ہیں۔ 47 افراد پر 2,2 اہلکاروں کے قتل کا الزام ہے۔ جبکہ فیصل نامی ٹارگٹ کلر نے مبینہ طور پر5 پولیس اہلکاروں کو قتل کیا۔ رینجرز کی جانب سے جاری فہرست میں عامر پاپا، آصف چٹا، مجید منجلا، عادل انصاری عرف پگلا، احمد عف بھورا، وسیم عرف ہوڈل، اصغر چھوٹا، اسلم نک چپٹا، آصف درندرہ، جاوید گنجا، منظور بکرا، ندیم مانی، قمر السلام تڑی، رفیق بیلی، ریحان کانا، سعید ڈانسر، شاہد دنبہ، شکیل سرکٹ، ساجد ایل ایم جی، رزاق عرف راجو، شبیر نائی، اور بد نام زمانہ قمر عرف ٹیڈی کے نام شامل ہیں۔ خط کی نقل وزیر اعلیٰ سندھ صوبائی چیف سیکریٹری اور آئی جی سندھ کو بھی ارسال کی گئی ہے۔ دوسری جانب ایم کیو ایم کے رہنما فاروق ستار نے رینجرز کی جانب سے کوئی خط ملنے کی تردید کی ہے۔ نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ رینجرز کی جانب سے مبینہ ٹارگٹ کلرز کی حوالگی کے حوالے سے کوئی خط موصول نہیں ہوا۔ ان کا کہنا تھا کہ ایم کیو ایم کے150 کارکن لا پتا ہیں۔ ان کی بازیابی کے لئے ہماری مدد کی جائے۔

Tags: