کراچی سمیت سندھ کے بلدیاتی اداروں میں افسران کی تبدیلی کا فیصلہ

August 5, 2015 5:18 pm0 commentsViews: 30

وزیربلدیات نے اپنی گرفت مضبوط کرنے کے لیے اہم عہدوں کے افسران تبدیل کرنے کی ہدایت کردی
کراچی(سٹی رپورٹر)حکومت سندھ کا بلدیاتی اداروں میں بڑے پیمانے پر افسران کی تبدیلی کا فیصلہ صوبائی وزیر بلدیات نے کراچی سمیت سندھ کے تمام بلدیاتی اداروں میں نئے افسران تعینات کر نے کے لیے افسران کی تلاش شروع کردی ذرائع کے مطابق وزیر بلدیات نے سندھ کے بلدیاتی اداروں پر گرفت مضبوط کر نے کے لیئے وزارت بلدیات کو تمام بلدیاتی اداروں کے اہم عہدوں پر تعینات افسران کو تبدیل کرکے ان کی جگہ نئے افسران تعینات کرنے کی ہدایت جاری کردی ہیں جس کے بعد افسران نے بلدیہ عظمیٰ کراچی حیدرآباد سمیت دیگر بلدیات میں اہم عہدے حاصل کرنے کے لیئے بھاگ دوڑ شروع کردی ہے اہم عہدوں کے خواہش مند افسران کی جانب سے وزیر بلدیات سے قربت رکھنے والے سرکاری افسران کے ساتھ ساتھ وزیر بلدیات کے قریبی دوستوں سے رابطے کرنا شروع کر دیئے ہیں ذرائع کا کہنا ہے کہ بعض افسران کی جانب سے وزارت بلدیات کے افسران کو پر کشش مرعات کی بھی پیشکشیں کی جارہی ہیںذرائع کا کہنا ہے کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کے ایڈمنسٹریٹر کے لئے ہاشم رضا زیدی، سجادعباسی اور رئوف اختر فاروقی کے ناموں پر غور کیا جا رہا ہے جبکہ ایم ڈی کراچی واٹر اینڈ سیوریج ڈبورڈ کو بھی تبدیل کر کے ان کی جگہ مصباح الدین فرید کو دوبارہ ایم ڈی واٹر بورڈ تعینات کرنے پر غور کیا جارہا ہے ۔

بلدیہ عظمیٰ کا آئی اون کراچی پروگرام کا کروڑوں روپے کا فنڈ منجمد
منصوبہ سابق ناظم کراچی مصطفیٰ کمال کے دور میں شروع کیا گیا تھا‘ فنڈ کیلئے بلدیہ کے ملازمین کی تنخواہ سے رقم کاٹی جاتی تھی
بعض افسران کی نظریں فنڈز پر لگی ہوئی ہیں‘ پروگرام کا مقصد عوام میں شہر کے حوالے سے شعور اجاگر کرنا تھا مگر ناظمین کے خاتمے کے ساتھ یہ پروگرام بھی ختم ہوگیا
کراچی (سٹی رپورٹر)بلدیہ عظمیٰ کراچی کا ’’آئی اون کراچی پروگرام‘‘ کا کروڑوں روپے فنڈز منجمد کردیا گیاہے ۔’’آئی اون کراچی پروگرام ‘‘سابق ناظم کراچی مصطفی کمال کے دور میں شروع کیا گیا تھا جس میں شہر کو اپنی ذمہ داری سنبھالنے کے حوالے سے پروگرامات ترتیب دیئے گئے تھے ۔مصطفی کمال کی جانب سے تمام بلدیہ عظمی کراچی کے افسران و ملازمین کی تنخواہوں میں سے کچھ حصہ اس کی فنڈ میں شامل کیا گیا تھا جس کے لئے شہر میں صفائی ستھرائی و دیگر معاملات شامل تھے۔تاہم ناظمین کے دور کے خاتمے کے ساتھ ہی آئی اون پروگرام بھی ختم کردیا گیا ہے ۔ذرائع کے مطابق پروگرام کے خاتمے کے بعد اور شہر میں اپنی ذمہ داری کا احساس بھی ختم ہوتا جارہا ہے ۔جس کے بعد مذکورہ منصوبے پرعمل در آمد کے لئے عملی اقدامات نہیں کئے جارہے ہیں۔جس کے باعث پروگرام کا پروجیکٹ آفس بند پڑا ہے پروگرام کی افتتاحی تقریب نیشنل اسٹیڈیم میں ہوئی تھی ۔ سٹی ناظم مصطفی کمال نے آئی اون کر اچی پروگرام کا فنڈز قائم کیا تھا اس فنڈز کیلئے بلدیہ عظمیٰ کراچی کے افسران وملازمین کی تنخواہوں سے پیسے کاٹے جاتے ہیں فنڈز کی مالیت اب تک کئی کروڑ ہوگئی ہے تاہم اس فنڈز کو استعمال کرنے کی اجازت نہیں ہے بلدیہ عظمیٰ کراچی کے بعض افسران کی نظریںاس فنڈز پرہیں۔ذرائع کے مطابق آئی اون کراچی کا مقصد لوگوں میں شعور بیدار کرنے کے لئے بنایا گیا تھا جس میں 11 ہزاررضاکاروں نے شہر میں صفائی ستھرائی و دیگر معاملات کو دیکھنا تھا ۔تاہم ناظمین کے دور کے اختتام کے بعد یہ پروگرام بھی ختم ہوگیا ہے ۔

Tags: