سول اور فوجی قیادت کی مشترکہ جدوجہد سے کراچی میں امن قائم ہوا‘ وزیر اعلیٰ سندھ

August 6, 2015 4:36 pm0 commentsViews: 15

سندھ میں رہنے والے مہاجروں کا نام لے کر کسی دوسرے ملک کو آنے کی دعوت دینے کا حق کسی کو نہیں ہے
کراچی کے ٹارگٹڈ آپریشن کو متنازعہ بنانے کی کسی بھی کوشش کو برداشت نہیں کرینگے‘ قائم علی شاہ کا ردعمل
کراچی( اسٹاف رپورٹر) وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے کہا ہے کہ کراچی میں قیام امن کیلئے پولیس اور رینجرز کی قربانیاں نا قابل فراموش ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سول اور فوجی قیادت کی مشترکہ جدوجہد کے صلے میں کراچی میں امن کا قیام ممکن ہوا ہے۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا کہ یہ شہر ہم سب کا ہے اور ہمیں قانون نافذ کرنے والے اداروں کا شکریہ ادا کرنا چاہئے۔ جنہوں نے غیر معمولی اقدامات کرکے کراچی میں امن بحال کروایا۔ واضح رہے کہ الطاف حسین نے لندن سے ٹیکساس کے ایک مجمع سے خطاب کرتے ہوئے نیٹو اور اقوام متحدہ کی فورسز کو کراچی میں بلانے کا مطالبہ کیا تھا اور انڈیا کو کراچی میں مہاجروں کے قتل کے خلاف ایکشن نہ لینے پر بزدل قرار دیا تھا۔ اس بیان کو وزیر اعلیٰ سندھ نے انتہائی نا قابل برداشت، غیر ضروری اور سب سے بڑھ کر غیر آئینی مطالبہ قرار دیا ہے۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا کہ سندھ میں رہنے والے مہاجر / اردو بولنے والے سندھی ہیں اور ان کا نام لے کر کسی دوسرے ملک کو دعوت دینے کا بہانا نہیں چلے گا۔ اور پاکستان کے اندرونی معاملات میں عمل دخل کرنے کا کسی بھی دوسرے ملک کو کوئی حق نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کراچی ٹارگٹیڈ آپریشن کو متنازع بنانے کی کسی بھی کوشش کو ہم برداشت نہیں کریں گے اور اس قسم کا مطالبہ ملک کی خود مختاری کے خلاف ہے۔ انہوں نے کہا کہ نیٹو فورس کو بلانے کا مطالبہ غیر آئینی ہے۔

Tags: