طاقتور صوبائی وزیر نے20 ارب کا ٹھیکہ غیر ملکی کمپنیوں کو دیدیا

August 13, 2015 3:39 pm0 commentsViews: 21

ٹھیکہ دینے میں اختیارات کا ناجائز استعمال کیا گیا، شرجیل میمن کو نیب ریفرنس کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے
سابق صوبائی وزیر بلدیات نے سپریم کورٹ کے فیصلوں اور احکامات کو نظر انداز کیا اور سیف سٹی کا ٹھیکہ دیا
کراچی( نیوز ڈیسک) کراچی میں20 ارب روپے کی لاگت سے نصب ہونے والی سی سی ٹی وی، سولر لائٹس اور وائی فائی کے بڑے منصوبے کا ٹھیکہ غیر قانونی اور قواعد کے خلاف3 ممالک کی نجی کمپنیوں کو الاٹ ہونے کا انکشاف ہوا ہے جس پر متعلق حکام سمیت ایک طاقتور صوبائی وزیر کو بھی نیب ریفرنس کا سامنا کرنا پڑ سکتاہے۔ ذرائع کے مطابق طاقتور صوبائی وزیر کی جانب سے14 جولائی 2015ء کو دبئی میں یادداشت نامے پر دستخط کئے گئے تھے اور اس میں یہ بھی کہا گیا تھا کہ یہ میگا منصوبہ رواں مالی سال کے آخر میں شروع کیا جائے گا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اس منصوبے کا حکام نے ابھی تک کوئی ٹینڈر بھی پاس نہیں کیا ہے جس سے غیر شفافیت، بد عنوانی، قواعد کی سنگین خلاف ورزی اور کھلے مقابلے کا عمل بھی متاثر ہوا، تاہم ٹھیکہ چین، دبئی اور یو ایس اے کی3بڑی کمپنیوں کو دیا گیا ہے جو سرا سر غیر قانونی ہے۔ اس عمل میں سابق صوبائی وزیر، محکمہ بلدیات کے حکام پر اختیارات کے ناجائز استعمال کرنے کا الزام ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ ایسے معاہدے کرنے سے سپریم کورٹ سمیت دیگر عدالتوں نے بھی حکومتوں کو سختی سے منع کیا ہے لیکن سندھ حکومت نے تمام فیصلوں کو نظر انداز کرکے کراچی سیف سٹی کے نام سے نئے میگا پراجیکٹ کا ٹھیکہ دیدیا ہے۔

Tags: