کورنگی‘ پولیس اہلکاروں کے قتل کے شبہ میں 39 افراد گرفتار

August 14, 2015 3:22 pm0 commentsViews: 26

پولیس کا مختلف علاقوں میں سرچ آپریشن ‘ اہلکاروں کے قتل کا مقدمہ درج‘ گرفتارافراد سے پوچھ گچھ
پولیس اہلکاروں کے قتل کیلئے جو اسلحہ استعمال ہوا اس سے پہلے بھی 10 افرادکو قتل کیا گیا‘ پولیس کا دعویٰ
کراچی( کرائم ڈیسک) پولیس نے زمان ٹائون میں 4 اہلکاروں کے قتل کے بعد سرچ آپریشن کرتے ہوئے39 مشتبہ افراد کو حراست میں لے کر تھانے منتقل کردیا۔ ملزمان کو سو کوراٹر جی ایریا اور مختلف علاقوں سے حراست میں لیا گیا‘ دوسری جانب پولیس نے اہلکاروں کے قتل کے قتل کا مقدمہ ایس ایچ او زمان ٹائون راجہ طارق کی مدعیت میں انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت نامعلوم دہشت گردوں کیخلاف درج کرلیا‘ مقدمہ الزام نمبر 370/2015 بحق سرکار درج کیا گیا جس میں دفعہ397,324,302اور انسداد دہشت گردی ایکٹ کی دفعہ 7ATA بھی شامل کی گئی ہے‘ ایک افسر نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا ہے کہ فارنزک لیبارٹری نے ابتدائی رپورٹ میں بتایا ہے کہ4پولیس اہلکاروں کے قتل میں جو ہتھیار استعمال ہوا اس اسلحے سے پہلے بھی 10 سے زائد افراد قتل ہوچکے ہیں جن میں5 پولیس اہلکاروں سمیت 9 افراد کو زمان ٹائون میں ہی قتل کیا گیا تھا‘ اسی پستول سے اعجاز خواجہ کو ڈیفنس میں قتل کیا گیا تھا‘ اس پستول سے پہلا قتل27 اگست 2014 ء میں کیا گیا تھا‘ زیادہ تر قتل لانڈھی اور زمان ٹائون میں کئے گئے‘ ناظم آباد میں ڈاکٹر باقر کو بھی اسی پستول سے قتل کیا گیا تھا‘ تفتیشی ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس نے عینی شاہدین کی مدد سے ملزمان کے خاکے تیار کرلئے ہیں‘تینوں ملزمان کی عمریں 20سے25 سال کے درمیان تھیں‘ موٹر سائیکل پر سوار تھے جس پر نمبر پلیٹ نہیں تھی‘ ملزمان فائرنگ کے بعد کوسٹ گارڈ چورنگی کی جانب فرار ہوئے۔

Tags: