تھر کے کوئلے سے بجلی بنانے کے منصوبے کیلئے 50 ارب روپے کے معاہدے

August 18, 2015 4:06 pm0 commentsViews: 24

سندھ اینگروکول مائننگ کمپنی کے شیئر ہولڈرز‘8 مقامی بڑے بینکوں پر مشتمل کنسوریشم میں ماسٹر شیئر ہولڈرز ایگریمنٹ طے
منصوبہ ملک کو توانائی میں خود کفیل بنانے میں سنگ میل ثابت ہوگا‘ وزیر اعلیٰ سندھ کا تقریب سے خطاب‘ 2018 میں پیداوار شروع ہوگی
کراچی(اسٹاف رپورٹر)سندھ حکومت کی شراکت سے تھر میں کوئلے سے بجلی بنانے کے منصوبے کے لیے مقامی بینکوں سے 50 ارب روپے کی فنانسنگ سے متعلق مختلف معاہدے طے پاگئے ہیں۔ وزیراعلیٰ سندھ کا کہنا ہے کہ صوبائی حکومت نے نجی سرمایہ کاروں کو اعتماد فراہم کیا۔ یہ منصوبہ ملک کو توانائی میں خودکفیل بنانے میں سنگ میل ثابت ہوگا۔ سندھ اینگروکول مائننگ کمپنی کے شیئر ہولڈرز اور پاکستان میں کام کرنے والے 8 بڑے بینکوں پر مشتمل کنسورشیم کے مابین کوئلے کی کان اور کوئلے سے بجلی پیدا کرنے کے منصوبے کے لیے 50 ارب روپے کی فنانسنگ کے سلسلے میں ماسٹر شیئر ہولڈرز ایگری منٹ طے پاگیا ہے۔ معاہدے پر سندھ اینگروکول مائننگ منصوبے میں شریک حبکو، تھل لمیٹڈ، حبیب بینک لمیٹڈ، اینگرو، سی پی آئی مینگ ڈونگ اور چائنا مشینری انجینئرنگ کارپوریشن کے نمائندوں نے وزیراعلیٰ سندھ قائم علی شاہ اور سینئر صوبائی وزیر مراد علی شاہ کی موجودگی میں دستخط کیے۔ سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی نے بینکوں کے ساتھ حکومت سندھ سے بھی معاہدوں پر دستخط کیے۔ معاہدے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ ملک کو توانائی میں خودکفیل بنانے کا واحد ذریعہ تھر میں کوئلے کے عظیم ذخائر ہیں۔ وفاقی حکومت بلوچستان میں لگنے والے کوئلے کے بجلی گھروں کے لیے آسٹریلیا کا کوئلہ درآمد کرنے کا فیصلہ کرچکی تھی تاہم سندھ حکومت نے وزیراعظم کا آگاہ کیا کہ تھرکا کوئلہ دنیا کا بہترین کوئلہ ہے جس پر وزیراعظم نے رائے تبدیل کرتے ہوئے تھرکول منصوبے کی سرپرستی اور معاونت کی جس کے ہم شکرگزار ہیں۔

Tags: