فش فیکٹریز مالکان نے جھینگے کا ریٹ گرا دیا، ماہی گیروں کا احتجاج

August 19, 2015 5:00 pm0 commentsViews: 57

مچھلی کے شکار پر پابندی سے قبل1500 روپے میں خریدا جانیوالا جھینگا اب صرف500 روپے میں خریدا جا رہا ہے
بندش سے قبل بھری ہوئی لانچ کے 20 لاکھ روپے ملتے تھے اب یومیہ لانچ کے8 لاکھ روپے ملتے ہیں، ماہی گیر
کراچی( اسٹاف رپورٹر) فش فیکٹریز مالکان نے سمندر سے آنے والے جھینگے کا ریٹ گرا دیا، دو ماہ کی مچھلی شکار کے پر پابندی سے قبل 1500 روپے میں خریدا جانے والا جھینگا صرف500 روپے میں خریدا جا رہاہے۔ لانچوں کے ناخدائوں اور ماہی گیروں کا فیکٹری مالکان کیخلاف احتجاج۔ تفصیلات کے مطابق سمندر میں جون، جولائی میں مچھلی کے شکار پر بندش کے بعد بڑے پیمانے پر ماہی گیر لانچوں میں راشن ، تیل، برف و دیگر اشیاء خوردونوش لیکر کئی روز کیلئے سمندر میں روانہ ہوئے جو جھینگے سے بھری لانچیں شکار کرکے واپس ابراہیم حیدری کی جیٹیوں پر لائی جا رہی ہیں ابراہیم حیدری، کورنگی سے کراچی فش ہاربر تک کی فش فیکٹری کے مالکان نے ساز باز کرکے جھینگے کا ریٹ گرا دیا ہے۔ ماہی گیروں نے بتایا کہ بندش سے قبل بھری ہوئی لانچوں کے 20 لاکھ روپے ملتے تھے اب پوری لانچ کا8 لاکھ روپے ریٹ لگایا گیا ہے جس سے مالکان ایک طرف غریب ماہی گیروں کی مزدوری بھی نہیں ملتی۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ فش فیکٹری مالکان کی مونو پولی کے خلاف کارروائی کرکے جائز ریٹ سے جھینگا خریدا جائے۔

Tags: