کراچی میں دہشت گردپھر سرگرم سینٹرل جیل اور پولیس پر کریکر حملے دواہلکار زخمی، سیکورٹی ہائی الرٹ

August 27, 2015 4:24 pm0 commentsViews: 20

دہشت گردوں نے قانون نافذ کرنیوالے اداروں اور حساس تنصیبات پر حملوں کا منصوبہ بنایا ہے، خفیہ اداروں نے کراچی کی انتظامیہ اور وزارت داخلہ کو آگاہ کردیا
پرانی سبزی منڈی کے قریب موٹرسائیکل سوار دہشت گرد سینٹرل جیل کی دیوار کے قریب دستی بم پھینک کر فرار ہوگئے جو پھٹ نہ سکا، بم کولڈڈرنک کے ٹین کے ڈبے میں بنایا گیا تھا جس میں کیلیں اور بال بیرنگ سمیت دھماکہ خیز مواد موجود تھا، واقعہ کے بعد سینٹرل جیل کی سڑک کو ٹریفک کے لیے بند کردیا گیا
سہراب گوٹھ کے قریب تین پولیس موبائلیں گشت پر تھیں اور چیکنگ کررہی تھیں، موٹرسائیکل سوار ملزمان موبائل پر کریکر پھینک کر فرار ہوگئے، دو پولیس اہلکار زخمی ہوگئے، ایک ریٹائرڈ فوجی ہے، بم حملوں کے بعد کراچی پولیس کے دفاتر اور دیگر تنصیبات پر سیکورٹی سخت کردی گئی، مشکوک افراد کی گرفتاری کا فیصلہ کرلیا گیا
کراچی( کرائم رپورٹر) کراچی میں دہشت گرد ایک بار پھر سرگرم ہوگئے‘ سینٹرل جیل اور پولیس پر کریکر حملوں کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں کے دفاتر کی سیکورٹی میں اضافہ کردیا گیا ہے‘ دہشت گردوں نے قانون نافذ کرنے والے اداروں اور اہم تنصیبات پر حملوں کا منصوبہ بنایا ہے‘ خفیہ اداروں نے کراچی کی انتظامیہ کو آگاہ کردیا تفصیلات کے مطابق شہر میں ایک بار پھر سے دیسی ساختہ کریکر حملوں کا سلسلہ شروع ہوگیا سنٹرل جیل کے قریب پھینکا گیا کولڈرنک کے کین میں بنایا گیاکریکر بم پھٹ نہیں سکا جبکہ فیڈرل بی صنعتی ایریا میں پولیس موبائل پر کریکر حملے میںدو پولیس اہلکار زخمی ہوگئے۔نیو ٹائون کے علاقے پرانی سبزی منڈی کے قریب واقعہ کراچی سینٹرل جیل پر دہشت گردی کا منصوبہ ناکام ہوگیا،موٹر سائیکل سوار نامعلوم دہشت گرد جیل کی دیوار کے باہر بنائی کی پولیس چوکی اور چند قدم کے فاصلے پر قائم رینجرز چوکی کے سبب کراچی سینٹر ل جیل پر بم پھینک نہیں سکے،ایس پی عابد قائم خانی کے مطابق سخت سیکیورٹی کے سبب دہشت گردوں نے پرانی سبزی منڈی سے رانگ سائڈ آکر جیل کے پاس بم رکھ کر فرار ہوگئے،تاہم واقعے کی اطلاع ملنے پر پولیس ،رینجرز کی اضافی نفری موقع پرپہنچ گئی اور جیل کو چاروں اطراف سے اپنے حصار میں لینے کے ساتھ بم کے مقام کو گھیرے میں لے لیا،جبکہ بم ڈسپوزل اسکوڈ کے عملے کو طلب کرلیا،جس نے مذکورہ بم کو ناکارہ بنایا،ایس پی کے مطابق مذکورہ بم مقامی کولڈرنک کے ٹین کے ڈبے میں بنایا گیا تھا،جس میں کیلیں اور بال بیئرنگ سمیت دھماکہ خیز مواد موجود تھا ،جبکہ پولیس نے سینٹرل جیل کے اطراف کی سڑکوں کو بھی عام ٹریفک کیلئے بند کردیا تھا،جو رات گئے تک ٹریفک کیلئے بند تھی۔دوسری جانب فیڈرل بی صنعتی ایریا تھانے کی حدود سہراب گوٹھ کے قریب ایس پی گلبرگ آفس کی تین پولیس موبائلیں معمول کے گشت پر تھیں اور چیکنگ کررہی تھیں اس دوران موٹر سائیکل سوار ملزمان آئے اور ایک کریکر پولیس موبائل پر پھینک کر فرار ہوگئے ، ایس ایچ او نعیم خان کے مطابق کریکر پولیس موبائل کے بونٹ پر گرا اور بعد ازاں نیچے گر کر پھٹ گیا جسکے نتیجے میں دو پولیس اہلکار محبوب اور مبارک معمولی زخمی ہوگئے۔انہوں نے بتایا کہ موقع پر موجود پولیس اہلکاروں کا کہنا ہے کہ وہ فوری طور پر یہ نہیں دیکھ سکے کہ کریکر کہاں سے پھینکا گیا ہے انہوں نے کہا کہ محبوب ریٹائرڈ فوجی ہے اور پولیس میں بھرتی کیے جانے والے ریٹائرڈ فوجیوں میں وہ بھی شامل ہے۔ذرائع کے مطابق مذکورہ واقعات کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں اور تھانوں کی سیکورٹی میں اضافہ کرکے ان کے گرد نظر آنیوالے مشکوک افراد کو گرفتار کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا ہے‘ جبکہ شہر کے حساس مقامات پر بھی سیکورٹی بڑھا دی گئی ہے‘ کراچی میں اچانک دہشت گردوں کے سرگرم ہونے کی اطلاع پر سندھ کے وزیراعلیٰ نے بھی تشویش کااظہار کرتے ہوئے کریکر حملوں کے ملزمان کو فوری گرفتار کرنے کے احکامات جاری کردیئے ہیں۔

Tags: