کرپشن میں ملوث بیرون ملک فرار ہونیوالی شخصیات کے ریڈ وارنٹ تیار

August 28, 2015 4:54 pm0 commentsViews: 43

حکومت نے گرفتاری کیلئے انٹر پول سے رابطہ کرلیا‘ انور مجید‘ منظور قادر کاکا اور شکیب قریشی سمیت سب کو واپس لایا جائیگا
ڈاکٹر عاصم کی گرفتاری سے کرپٹ سرکاری و سیاسی افراد کی نیندیں اڑ گئیں بیشتر بیرون ملک جانے کی تیاری کررہے ہیں
کراچی(رپورٹ۔فرید عالم)تحقیقاتی اداروں کی کرپش میں ملوث افراد کے خلاف کامیاب اوربھرپورکارروائیوں نے کرپٹ سرکاری وسیاسی افراد کی نیندیں اُڑا دیں،اعلیٰ سرکاری و سیاسی شخصیات کے گردگھیرا مزید تنگ ہوگیا،کے ایم سی،ایم ڈی اے ،لیاری ری سیٹلمینٹ اتھارٹی ،سوئی سدرن،بورڈ آف ریونیو،کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ،سمیت دیگر اداروں میں تحقیقاتی اداروں کی تابڑ توڑ کارروائیاں،کئی افسران گرفتارکئی فرارہوگئے، بیرون ملک فرار بڑی مچھلیوں کو گرفتار کرنے کے لئے ریڈ وارنٹ تیار کر لئے گئے وفاقی تحقیقاتی ادارے کاانٹرل پول سے ر ابطہ ،انور مجید،منظور قادر کاکا،شکیب قریشی سمیت فرار ہونے والے تمام افراد کو گرفتار کر کے ملک واپس لانے کا فیصلہ،ڈاکٹر عاصم کی گرفتاری نے سیاسی میدان میں ہلچل مچادی جبکہ تحقیقاتی اداروں کا سیاسی دبائو قبول کر نے سے انکار،سندھ کے سرکاری اداروںمیں کرپشن میں تیزی سے کمی آنے لگی،تفصیلات کے مطابق وفاقی تحقیقاتی اداروں کی جانب سے کرپشن کے خلاف بھر پور کارروائیوں کے مثبت نتائج آنا شروع ہوگئے گزشتہ چند روز کے دوران تحقیقاتی اداروں کی جانب سے کی گئیں کامیاب کارراوئیوں نے کرپٹ سرکاری افسران اور سیاسی شخصیات کی نیندیں اُڑا کر رکھ دیں اعلیٰ سرکاری اورسیاسی شخصیات نے گرفتاری سے بچنے کے لیئے اپنی ضمانتیں کرانے کے ساتھ ساتھ اعلیٰ سطح پر رابطے کر کے تحقیقاتی اداروں کی جانب سے کی جانے والی کارروائیوں پر روک لگانے کے لئے دبائو ڈالا جا رہا ہے جبکہ سیاسی شخصیات کی جانب سے بھی وفاقی تحقیقاتی اداروں کی چھاپہ مار کارروائیوں پر تحفظات کا اظہار کیا جارہا ہے دوسری جانب وفاقی تحقیقاتی اداروں نیب اور ایف آئی اے کے بعد اینٹی کرپشن سندھ نے بھی کرپشن کے خلاف بھرپور آپریشن کا آغاز کر دیا ہے دوروزقبل نیب نے کارروائی کرتے ہوئے سابق وفاقی وزیر اور سندھ کی اہم سیاسی شخصیت ڈاکٹر عاصم کو زمینوں پر قبضے،سی این جی کے غیر قانونی ٹھیکوں اور کروڑوں روپے غیر قانونی طور پر بیرون ملک منتقل کرنے کے الزام میں گرفتار کیا تھا ڈاکٹرعاصم سے ملنے والی معلومات پر گذشتہ روز سندھ بورڈ آف ریونیو کے سابق چیرمین شکیب قریشی کی گرفتاری کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے تاہم شکیب قریشی گرفتاری سے بچنے کے لئے لندن چلے گئے ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈاکٹرعاصم نے شکیب قریشی کے ذریعے کروڑوں رپے کی زمین حاصل کی تھی گذشتہ روزہی اینٹی کرپشن نے کارروائی کرتے ہوئے لیاری ری سیٹلمینٹ کے ڈی ڈی او سمیت دو تپے داروں کو قیمتی پلاٹوں کے الاٹمینٹ میں جعلسازی کے الزام میں گرفتار کر کے اہم پلاٹوں کی فائلیں قبضے میں لے کر تحقیقات شروع کر دیں ذرائع کے مطابق تحقیقات کے دوران مزید افسران کی گرفتاری کا امکان ہے جبکہ ایف آئی اے نے ایک کارروائی کرتے ہوئے سوئی سدرن گیس کے سینئر جنرل مینجر ماجد ملک اور مینجر خالد راٹھور کو ان کے گھروں سے گرفتار کر کے معلومات حاصل کر نے کے بعد چھوڑ دیا جبکہ سابق جنرل منیجر زہیر صدیقی کے لیئے چھاپے مارے جا رہے ہیں تاہم زہیرصدیقی کوتاحال گرفتار نہیں کیا جاسکادوسر ی جانب اربوں روپوں کی مبینہ کرپشن میں ملوث ملک سے فرار سرکاری افسران کو گرفتار کر کے ملک لانے کے لئے وفاقی تحقیقاتی اداروں نے انٹرپول سے رابطے بڑھانا شروع کر دیئے ہیں ذرائع کے مطابق اربوں روپے کی مبینہ کرپشن میں ملوث سندھ کے اعلیٰ سرکاری افسران ڈی جی سندھ بلڈنگ کنٹرول منظور قادر کاکا،سابق ایڈمنسٹریٹر ثاقب سومرو، بورڈ آف ریونیو کے شکیب قریشی ،سمیت اعلیٰ سیاسی شخصیت اویس مُظفر کے ریڈ وارنٹ تیار کر لئے گئے ہیں ذرائع کے مطابق جلد ہی تحقیقاتی ادروں کے اعلیٰ افسران پر مشتمل ایک ٹیم ان افراد کو گرفتار کرنے جائے گی جبکہ نیب نے سندھ کے مختلف اداروں بشمول کے ایم سی،ایچ ایم سی سے گذشتہ5برسوں میں ترقیاتی منصوبوں کے لیئے جاری ہونے والے فنڈز کا یکارڈ طلب کر لیا ہے ذرائع کے مطابق آئندہ چند روز میں اہم سرکاری اور سیاسی شخصیات کو گرفتار کیے جانے کا امکان ہے دوسری طرف تحقیقاتی اداروں کی جانب سے کرپشن کے خلاف آپریشن اور گرفتاریوں نے سندھ کے سیاسی میدان میں ہلچل مچا دی ہے کر پشن میں ملوث کئی شخصیات نے گرفتاری سے بچنے کے لئے نہ صرف اپنی حفاظتی ضمانتیں کروالی ہیں بلکہ وفاقی سطح پرتحقیقاتی اداروں کی جانب سے جاری آپریشن پر شدید تحفظات کا ااظہار بھی کیا ہے جبکہ بدترین کرپشن میں ملوث سندھ کے سرکاری اداروں میں جاری کرپشن میں واضح کمی آناشروع ہوگئی ہے ۔

Tags: