سندھ میں بلدیات سمیت 11 محکموں کے 41 کرپٹ افسران کو گرفتار کرنے کا حکم

September 1, 2015 2:28 pm0 commentsViews: 25

پراپرٹی کے جعلی کاغذات بنانے پر ٹی ایم او لطیف آباد ‘ کے ایم سی کے ڈی ڈی او اور دیگر کے خلاف مقدمات درج کئے جائیں گے
کارروائی مکمل ہونے پر بدعنوان افسران کو گرفتار کرلیا جائے گا‘ چیئرمین اینٹی کرپشن‘ چیف سیکریٹری نے تمام محکموں سے کرپٹ افسران کی فہرستیں مانگ لیں
کراچی( اسٹاف رپورٹر) چیف سیکریٹری سندھ نے کرپشن میں ملوث11 مختلف محکموں کے41 افسران کیخلاف محکمہ اینٹی کرپشن کو مقدمات درج کرنے اور قانون کے مطابق گرفتار کرنے کا حکم دیا ہے۔ یہ فیصلہ پیر کو چیف سیکریٹری سندھ صدیق میمن کی زیر صدارت اینٹی کرپشن کمیٹی ون کے اجلاس میں کیا گیا‘ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ محکمہ بلدیات میں4 مقدمات درج کئے جائیں گے‘ جس میں پراپرٹی جعلی کاغذات بنانے پر ٹی ایم او لطیف آباد ظفر بیگ مغل‘ ارشد پٹھان‘ یاسین شاہ‘ قاضی نسیم‘ قاضی نہال ‘29ملین روپے کے غبن کے الزام میں ٹی ایم او سوبھو ڈیرو انور علی بلوچ ان کے عملے امداد علی شاہ‘ افضل حسین دایو‘ قادر بخش کلہوڑ ‘پراپرٹی کے جعلی کاغذات بنانے پر سٹی ڈسٹرکٹ گورنمنٹ کراچی (موجودہ کے ایم سی) کے ڈی ڈی او عمران قدیر‘ خالد ہاشمی‘ ندیم سفیان‘ کلرک شاہد اقبال‘ سلیم مسیح الدین‘ منگھو پیر میں غیر قانونی ہائیڈرنٹ چلانے کے الزام میں واٹر بورڈ کے اظہار الدین‘ اعجاز عالم‘ عبدالقادر عارف فاروقی‘ صفی اللہ خان شامل ہیں‘ ایکسائز کے محکمہ میں دو مقدمات بنائے جائیں گے‘ جن میں کراچی موٹر رجسٹریشن ونگ میں گاڑیوں کے جعلی کاغذات بنانے پر اعجاز احمد‘ شوکت چنہ‘ شیر گل‘ اطہر سعید اور محمد ظفر اور موٹر رجسٹریشن ونگ جیکب آباد کے وحید احمد شیخ شامل ہیں‘ محکمہ خوراک میں250 میٹرک ٹن سرکاری گندم کی ہیر پھیر میں فوڈ انسپکٹر خیر پور محمد علی اجن جبکہ سندھ کو آپریٹو سوسائٹی میں اراضی کی غیر قانونی الاٹمنٹ میں ملوث سلیم الدین چشتی‘ اطہر حسین‘ عبدالعزیز اور دیگر کیخلاف مقدمات درج کئے جائیں گے‘ چیئرمین اینٹی کرپشن سید ممتاز شاہ کا کہنا ہے کہ کارروائی مکمل ہونے پر بد عنوان افسران کو گرفتار کیا جائیگا۔ چیف سیکریٹری نے تمام صوبائی محکموں کے سیکریٹریز اور مجاز اتھارٹیز سے کرپشن میں ملوث افسران کی فہرستیں طلب کرلی ہیں۔

Tags: