لینڈ مافیا کیخلاف کارکردگی شہر میں 30 ارب روپے کی زمین قبضے سے بچ گئی

September 4, 2015 7:15 pm0 commentsViews: 29

نیب اور دیگر اداروں کی جانب سے من پسند افراد کو الاٹ کردہ 10 ارب روپے سے زائد کی اراضی خالی کرانے کیلئے کارروائی جاری
سول ایوی ایشن اتھارٹی نے جناح ٹرمینل سے متصل 100 ایکڑ اراضی کو قبضہ مافیا سے بچانے کیلئے چار دیواری کی تعمیر شروع کردی
کراچی( نیوز ڈیسک) کراچی میں لینڈ مافیا اور سرکاری اراضی پر قبضہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی نے وفاقی، صوبائی اور بلدیاتی اداروں کی30 ارب روپے سے زائد کی اراضی کو بچا لیا جب کہ10 ارب روپے سے زائد مالیت کی اراضی سے قبضہ خالی کرانے کیلئے تحقیقاتی ادارے کارروائی کر رہے ہیں۔ اس اراضی میں کے ایم سی سمیت شہری اداروں کو چائنا کٹنگ میں قبضہ کی جانے والی اراضی شامل نہیں ہے۔ سب سے زیادہ پاکستان ریلوے کی اراضی پر قبضہ کرکے رہائشی و کمرشل منصوبے تعمیر کر لئے گئے ہیں۔ سول ایوی ایشن اتھارٹی نے قبضہ ہونے سے بچانے کیلئے کراچی کے جناح ٹرمینل سے متصل 100 ایکڑ سے زائد اراضی پر چار دیواری تعمیر کرنے کے بعد سول ایوی ایشن اتھارٹی کی حدود میں واقع رہائشی کالونی میں کئی ایکڑ پر مشتمل کھیل کے میدانوں کو قبضہ مافیا سے بچانے کیلئے خار دار تار اور چار دیواری کی تعمیر شروع کر دی ہے۔ PIA کے ملازمین کی رہائشی اسکیم کی110 ایکڑ اراضی پر قبضہ ہے اسے خالی کرانے کیلئے PIA نے متعلقہ محکموں سے رابطہ کر لیا۔ پاکستان ریلوے نے ریلوے لائنوں کے ساتھ واقع مختلف علاقوں میں اپنی اراضی کو قبضہ مافیا سے بچانے کیلئے متعدد وفاقی اداروں کے علاوہ صوبائی اور بلدیاتی اداروں نے بھی چار دیواری کی تعمیر شروع کر دی ہے۔ اور اراضی کے باہر زمین کا رقبہ سروے نمبر اور دیگر تفصیلات پر مبنی بورڈ آویزاں کر دئیے ہیں۔ ذرائع کے مطابق کراچی میں سرکاری اور نیم سرکاری اداروں کی قبضہ کی گئی زمینوں پر نیب کراچی اور دیگر ادارے تحقیقات کر رہے ہیں اس کی مالیت تقریباً 10 ارب سے زائد ہے جو خلاف ضابطہ من پسند افراد کو الاٹ کی جا چکی ہے۔

Tags: