ابراہیم حیدری، لینڈ مافیا نے سرکاری اراضی3 کروڑ میں بیچ دی

September 9, 2015 1:58 pm0 commentsViews: 17

مختار کار گھوٹہ آباد نے فروخت غیر قانونی قرار دیکر مقدمہ درج کرانے کی درخواستیں تھانے میں جمع کرا دیں
کراچی(نیوز ڈیسک) ابراہیم حیدری میں سرکاری زمین پر لینڈ مافیا کا قبضہ، 3 کروڑ روپے میں سودا کرلیا گیا، مختیارکار گوٹھ آباد کی طرف سے سرکاری زمین کی فروخت غیر قانونی قرار، لینڈ مافیا کے سرغنہ کیخلاف ابراہیم حیدری تھانہ اور اینٹی انکروچمنٹ میں درخواستیں جمع، ملزمان کی گرفتاری کا مطالبہ‘تفصیلات کے مطابق ابراہیم حیدری میں موجود سینکڑوں ایکڑ سرکاری زمین پر لینڈ مافیا کے کارندوں عبدالستار بلوچ، طارق مسیح، جاوید کُتیا اور لالو بنگالی نے اپنے قبضے میں لیکر فروخت کرنا شروع کردی ہے۔ اس سلسلے میں معلوم ہوا ہے کہ جمعہ گوٹھ میں موجود سرکاری زمین پر قبضے کے بعد 3 کروڑ روپے کی زمین بھی فروخت ہوچکی ہے۔ اس غیر قانونی عمل کیخلاف مختیارکار گوٹھ آباد کی طرف سے سرکاری زمینوں پر قبضوں کیخلاف ابراہیم حیدری تھانہ اور اینٹی انکروچمنٹ میں درخواستیں جمع کرادی گئی ہیں، جن میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ لینڈ مافیا کے کارندوں نے ابراہیم حیدری میں چارن محلہ، علی اکبر شاہ گوٹھ، جمعہ گوٹھ، الیاس جت گوٹھ سمیت متعدد مقامات پر موجود سینکڑوں ایکڑ سرکاری زمین پر قبضہ کرلیا ہے۔ انہوں نے مزید موقف اختیار کیا ہے کہ ان کیخلاف کارروائی کرتے ہیں تو وہ اپنے مسلح افراد لیکر ہم پر حملہ کرواتے ہیں، جس کی وجہ سے ہمیں خطرات لاحق ہوگئے ہیں۔

Tags: