کراچی میں بڑی دہشت گردی کا خطرہ مذہبی شخصیات نشانے پر آگئیں

September 11, 2015 3:10 pm0 commentsViews: 25

شہر میں دہشت گردی کی نئی لہردہشت گرد تنظیموں کا آپس میں گٹھ جوڑ کا نتیجہ ہے
ملک دشمن عناصر حکومت کی جانب سے دہشت گردی، بھتہ خوری اور لاقانونیت کے خلاف کارروائیوں کو غیرموثر بنانے کے لیے سرگرم، کالعدم لشکر جھنگوی اور القاعدہ نے تخریب کاری کرنے کے لیے گٹھ جوڑ کرلیا
جرائم پیشہ عناصر اور کالعدم تنظیموں نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کو چکمہ دینے کے لیے نئی حکمت عملی اختیار کرلی، دہشت گرد واردات کے اصل منصوبہ سازوں کو بچانے کے لیے ’’چینل ٹو‘‘ کی اصطلاح استعمال کرنے لگے ہیں
کراچی( نیوز ڈیسک) ملک بھر میں دہشت گردوں کے خلاف کارروائیاں جاری ہیں تاہم ملک دشمن عناصر اور دہشت گرد حکومتی کارروائیوں کو غیر موثر بنانے کیلئے پوری قوت سے مزاحمت کر رہے ہیں۔ ذرائع نے اس سلسلے میں انکشاف کیا ہے کہ کالعدم لشکر جھنگوی اور القاعدہ نے دہشت گردی کے لئے گٹھ جوڑ کر لیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ شہر میں دہشت گردی کی نئی لہر دہشت گرد تنظیموں کا آپس میں گٹھ جوڑ کرنے کا نتیجہ ہے۔ جبکہ کالعدم لشکر جھنگوی اور القاعدہ بر صغیر پاک و ہند کی جانب سے کراچی میں دہشت گردی کی ایک بڑی کارروائی کرنے کی تیاری کا انکشاف ہوا ہے۔ ایک حساس ادارے کی جانب سے جاری کئے گئے مراسلے کے مطابق القاعدہ بر صغیر پاک و ہند اور لشکر جھنگوی کا امیر نعیم بخاری اپنے ساتھیوں کے ہمراہ کراچی اور پنجاب میں دہشت گردی کی بڑی کارروائیوں کی تیاری کر رہا ہے مراسلے کے مطابق ملزمان سیاسی شخصیات، بیورو کریٹس، قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں کو نشانہ بنانے کے ساتھ ساتھ فرقہ وارانہ بنیادوں پر مذہبی شخصیات کی ٹارگٹ کلنگ کی بھی تیاری کررہے ہیں۔ مراسلے میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کو کہا گیا ہے کہ وہ اس حوالے سے سیکورٹی کے غیر معمولی اقدامات کو یقینی بنائے۔ علاوہ ازیں شہر میں جاری حالیہ ٹارگٹ کلنگ کے حوالے سے سنسنی خیز انکشافات سامنے آئے ہیں انٹیلی جنس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے حالیہ ٹارگٹ کلنگ کے پیچھے عناصر کا پتا چلا لیا ہے۔ اعلیٰ سیکورٹی ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ شہر کے جرائم پیشہ عناصر کراچی آپریشن جبکہ کالعدم جماعتیں آپریشن ضرب عضب سے پریشان ہیں۔ یہی وجہ دونوں عناصر کے آنے کا باعث بنی اور اب دونوں کا آپس میں گٹھ جوڑ ہو چکا ہے۔ اعلیٰ سیکورٹی ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ شہر کے جرائم پیشہ عناصر نے اپنے کارندے کالعدم جماعتوں میں داخل کر دئیے ہیں ۔ دہشت گردوں نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کو چکمہ دینے کیلئے ’’چینل ٹو‘‘ کی اصطلاح استعمال کرتے ہیں۔ ’’چینل ٹو ‘‘سے کام کرانے سے مراد دہشت گردی کی کارروائی کسی اور گروپ یا تنظیم سے کرانا ہوتا ہے تا کہ اس واردات کے اصل منصوبہ سازوں کاپتہ نہ چل سکے۔ سیکورٹی اداروں کے پاس ’’ چینل ٹو‘‘ کی اصطلاح سے متعلق ہونے والی گفتگو کا ریکارڈ موجود ہے،۔ سیکورٹی ذرائع نے بتایا کہ کالعدم جماعتیں شہر کا امن تباہ کرنے والوں کا بھر پور ساتھ دے رہی ہیں اور کئی واقعات میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ہاتھ ٹھوس شواہد ملے ہیں۔ جس سے ثابت ہوتا ہے کہ یہ دہشت گرد کارروائیاں کالعدم جماعتوں کی جانب سے کی جا رہی ہیں۔ ایک اعلیٰ اینٹی جنس ذرائع کے مطابق شہر میں القاعدہ کی بر صغیر شاخ کے گروہ بھی ان ٹارگٹ کلنگ کی وارداتوں میں ملوث ہیں۔

Tags: