آج صبح متحدہ کا یوم سوگ، شہر میں کوئی ہڑتال نہیں ہوگی، رینجرز حکام

September 12, 2015 1:08 pm0 commentsViews: 30

گلشن معمار میں کارکنوں کو ماورائے عدالت قتل کیا گیا، پرامن یوم سوگ پر تاجروں اور ٹرانسپورٹرز سے سرگرمیاں معطل رکھنے کی اپیل کی ہے، فاروق ستار
شہر کے بیشتر علاقوں میں کاروباری سرگرمیاں معمول کے مطابق جاری ہیں، چند علاقوں میں کاروبار جزوی بند ہے، امن برقرار رکھنے کے لیے حساس علاقوں میں پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری گشت کررہی ہے
عزیزآباد فیڈرل بی ایریا، لیاقت آباد،ناظم آباد، نارتھ کراچی، ملیر،لانڈھی، کورنگی اور شاہ فیصل کے علاقوں میں رات گئے رینجرز کا فلیگ مارچ اور اسنیپ چیکنگ، قاتلوں کی سرپرستی اور ان کے مارے جانے پر واویلا ناقابل فہم ہے، رینجرز ترجمان
آج یوم سوگ کے موقع پر مقتول کارکنان کے ایصال ثواب کے لیے فاتحہ خوانی ہوگی، ماورائے عدالت اور ٹارگٹ کلنگ میں مرنے والے کارکن کے لواحقین سے اظہار یکجہتی کیاجائے گا، کل لیاقت آباد سے ریلی نکالی جائے گی، فاروق ستار
کراچی( مانیٹرنگ ڈیسک/ کرائم رپورٹر) کراچی میں آج متحدہ قومی موومنٹ کی جانب سے کارکنوں کی ہلاکت پر یوم سوگ منانے اور تاجر برادری و ٹرانسپورٹرز سے کاروباری سرگرمیاں بند رکھنے کی اپیل پر شہر کے چند علاقوں میں کاروبار جزوی طور پر بند ہے جبکہ شہر کی اکثر مارکیٹیں اور کاروبار کھلے ہیں جبکہ ٹرانسپورٹ چل رہی ہے۔ آج شہر میں سیکورٹی کے سخت ترین انتظامات کئے گئے ہیں اور حساس علاقوں میں پولیس و رینجرز کا گشت جاری ہے۔ دوسری طرف پاکستان رینجرز سندھ نے ایم کیو ایم کی جانب سے آج یوم سوگ اور ہڑتال کے اعلان پر اپنے سخت رد عمل میں کہا کہ آج ( ہفتہ) شہر میں کوئی ہڑتال نہیں ہوگی۔ قاتلوں کی سرپرستی اور ان کے مارے جانے پر واویلا نا قابل فہم ہے۔ علاوہ ازیں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے رات گئے خصوصی اقدامات کرنے شروع کر دئیے تھے، اس دوران ممکنہ طور پر کشیدگی پھیلانے اور زبردستی دکانیں بند کرانے والوں سے نمٹنے کیلئے حساس علاقوں میں پہلے پولیس اور رینجرز کی جانب سے فلیگ مارچ کئے گئے، اس کے بعد ان علاقوں میں اضافی ناکے لگا کر گشت بڑھا دیا گیاجن علاقوں میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کی جانب سے فلیگ مارچ کیا گیا ان میں فیڈرل بی ایریا، لیاقت آباد، عزیز آباد، ناظم آباد، نارتھ کراچی، ملیر، لانڈھی، کورنگی، اور شاہ فیصل کالونی کے علاقے گلستان جوہر کے علاقے شامل ہیں۔ ان علاقوں میں آج صبح بھی پولیس اوررینجرز کی نفری تعینات ہے اکثر مقامات پر اسنیپ چیکنگ کا سلسلہ شروع کر دیا گیا تھا جبکہ ناکے لگا دئے گئے تھے۔ ان علاقوں میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کی بھاری نفری مسلسل گشت کر رہی ہے۔ صوبائی وزیرداخلہ سندھ سہیل انورخان سیال نے کراچی سمیت سندھ بھر میں پولیس کو ہائی الرٹ کر دیا،آئی جی سندھ کو ہدایت کی گئی ہے کہ شر پسندوں کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کی جائے،کسی کو بھی قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دی جائے گی،پولیس عوام کی جان و مال کی حفاظت کو یقینی بنائے،شرپسندوں کو دیکھتے ہی گرفتار کر لیا جائے،پولیس کراچی سمیت سندھ بھر میں چیکنگ کا نظام موثر بنائے۔ شر پسندوں پرکڑی نگاہ رکھی جائے،تمام سینئر پولیس افسران صورتحال کو خود مائنیٹرکریں۔جبکہ گزشتہ روز نائن زیرو پر رابطہ کمیٹی کے دیگر ارکان کے متحدہ قومی موومنٹ کے رہنما فاروق ستار نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم کے3 کارکنان زوہیب اللہ، محمد عدیل اور غلام کے ماورائے عدالت قتل اور ایم کیو ایم کورنگی سیکٹر یونٹ75 کی یونٹ کمیٹی کے رکن آفتاب حسین کی حقیقی کی فائرنگ سے ہلاکت کے واقعات کے خلاف آج 12 ستمبر ہفتہ کو ملک بھر میں پر امن یوم سوگ کا اعلان کیا ہے اور تاجروں، صنعتکاروں اور ٹرانسپورٹرز سے اپیل کی ہے کہ وہ یوم سوگ کے موقع پر اپنا کاروبار اور دیگر سرگرمیاں بند رکھیں اور یوم سوگ کو پر امن بنانے کیلئے تعاون کریں۔ رابطہ کمیٹی نے کہا کہ یوم سوگ کے موقع پر مقتول کارکنان کے ایصال ثواب کیلئے قرآن خوانی و فاتحہ خوانی کا اہتمام کیا جائے گا۔ بازوئوں پر سیاہ پٹیاں باندھی جائیں گی۔ اورماورائے عدالت اور ٹارگٹ کلنگ میں مرنے والے کارکنان کے لواحقین سے یکجہتی کا اظہار کیا جائے گا جبکہ کل 13 ستمبر بروز اتوار کو لیاقت آباد شہدائے اردو سے مزار قائد تک بہت بڑی ریلی بھی نکالی جائے گی۔ انہوں نے پیشکش کی کہ ایم کیو ایم کے150 کارکنان میں سے اب جو ایک147 کارکنان پولیس اور رینجرز کی تحویل میں ہیں انہیں ظاہر کر دیا جائے ہم پچھلا حساب نہیں مانگیں گے۔

Tags: