سرخ چاند یہودیوں کی بادشاہت کا پیش خیمہ ہو سکتا ہے،نجومیوں کا انکشاف

September 29, 2015 3:10 pm0 commentsViews: 135

سپر مون دنیا میں کسی بڑی تبدیلی کا اشارہ اور اسرائیل کیلئے فتح کی نشانی بھی ہے
دنیا میں سرخ چاند جب بھی دیکھا گیا ، سیاسی تبدیلیاں رونما ہوئی، پاکستان کا قیام واضح مثال ہے
33 برس کے بعد لاکھوں افراد نے چاند گرہن کے نظارے کیے، مختلف ممالک میں دیکھا گیا
کراچی( مانیٹرنگ ڈیسک) سرخ چاند کے بارے میں ناسا کا کہنا ہے کہ یہ چاند18 ماہ کے دوران وقفے وقفے سے نمودار ہوتا ہے اور چاند گرہنوں کے بعد یہ عمل مکمل ہوجاتا ہے۔ یہوی نجومی سرخ چاند کو دنیا میں کسی بڑی تبدیلی کا اشارہ سمجھتے ہیں یہودیوں کو بادشاہت ملنے والی ہے۔ اسرائیل کیلئے فتح کی نشانی ہے۔ 33 برس بعد لاکھوں افراد نے چودھویں کا چاند گرہن لگ جانے سے سپر بلڈ مون دیکھا، سپر مون کو گرہن لگنے سے اس کا رنگ سرخ ہوجاتا ہے جسے بلڈ مون کہتے ہیں۔ پیر اور اتوار کی درمیانی شب مکمل چاند گرہن ہوا اور دنیا کے کئی ممالک میں آسمان پر ایک ایسا چاند نمودار ہوا جو نہ صرف معمول سے بڑا تھا بلکہ اس کا رنگ بھی سرخ تھا۔ دنیا کے مختلف ممالک میں لاکھوں افراد اس نظارے کو دیکھنے کیلئے موجود تھے۔ چاند کے زمین کے مدار سے انتہائی قریب ہونے کی وجہ سے اسے سپر مون کہا جاتا ہے۔ سپر مون کا یہ عمل اگر چاند گرہن کے دوران ہو تو لہو رنگ چاند بن جاتا ہے امریکی خلائی ایجنسی ناسا کا کہنا ہے کہ سپر مون اور چاند گرہن آخری بار 1982 میں اکٹھے ہوئے تھے۔ اور ایسا اب 2033 میں ہوگا۔ دنیا کی تاریخ میں جب بھی خونی چاند گرہن ایک ترتیب سے ظاہر ہوئے تو دنیا میں بڑی سیاسی واقعات رونما ہوئے۔1492 اور93 کے درمیان خونی چاند چڑھے تو اسپین میں عیسائی فوجیوں نے چڑھائی کر دی جس میں یہودیوں اور مسلمانوں کا قتل عام ہوا جبکہ مسلمانوں کی اسپین سے بادشاہت ختم ہوئی۔ دوسری بار چاند گرہنوں کی سیریز 1949 اور50 کے درمیان ہوئی۔ اس دوران پاکستان کا قیام وجود میں آچکا تھا جبکہ یہودیوں نے فلسطینیوں کو ان کے ملک سے بے دخل کرکے اسرائیل کی ریاست بنا ڈالی۔ 1967 اور68 میں چار سرخ چاند چڑھے اس سالوں میں اسرائیل نے امریکا کی مدد سے یرو شلم میں مسلمانوں کے قبلہ اول پر قبضہ کیا تو 2 ہزار سال بعد بیت المقدس مسلمانوں کے ہاتھ سے نکل گیا۔ اس بار یہودی نجومیوں کا کہنا ہے کہ خونی چاند سے ہونے والے واقعات کا انتظار کیا جائے۔ یہودی 2 ہزار سال سے سرخ چاند گرہن کا انتہائی گہرائی سے مطالعہ کر رہے ہیں۔ یہودیوں کی مقدس کتاب تالمود میں لکھا ہے کہ جب ایسا چاند گرہن لگتا ہے تو وہ بنی اسرائیل کیلئے فتح کی نشانی بھی ہے۔

Tags: