ٹی وی اینکرز پارلیمنٹ پر لعنت بھجتے ہیں مگر پیمرا خاموش ہے قائمہ کمیٹی

October 2, 2015 12:29 pm0 commentsViews: 22

ٹاک شوز میں سیاستدانوں کو چور اور ڈاکو کے طور پر پیش کیا جارہا ہے‘ بوڑھے اینکرز نوجوان لڑکیوں کو سامنے بٹھا کر ہمیں گالیاں دیتے ہیں
پیمرا نے معاملات درست نہیں کئے تو تحریک استحقاق لائیں گے‘ پیر اسلم بودلہ کی صدارت میں اجلاس‘ ضابطہ اخلاق پر عملدر آمد کیلئے کمیٹی قائم
اسلام آباد( نیوز ایجنسیاں) قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات و نشریات نے ٹی وی چینلز پر سیاست دانوں اور پارلیمنٹیرینز کو ڈاکو اور چور کے طور پر پیش کرنے سمیت شواہد کے بغیر الزامات عائد کرنے کے عمل کو روکنے میں ناکامی پر پاکستان الیکٹرونک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی ( پیمرا) کے کردار پر سخت تشویش کا اظہار کر تے ہوئے تنبیہ کی ہے کہ اگر پیمرا نے معاملات درست نہ کئے تو تحریک استحقاق لائینگے۔ جس پر کمیٹی نے پیمرا معاملات کا جائزہ لینے اور ضابطہ اخلاق پر عملدر آمد کیلئے سب کمیٹی تشکیل دیدی ہے۔ قومی اسمبلی کی قائمہ برائے اطلاعات و نشریات کا اجلاس چیئر مین پیر اسلم بودلہ کی سربراہی میں ہوا جس میں دانیال عزیز نے کہا کہ ٹاک شوز میں ہم نا سور بن چکے ہیں سیاست دانوں کو ڈاکو، چور کے طور پر پیش کیا جا رہا ہے جبکہ بوڑھے اینکر نوجوان لڑکیوں کو سامنے بٹھا کر ہمیں ماں بہن کی گالیاں دیتے ہیں۔ ٹی وی اینکر پارلیمنٹ پر لعنت بھیجتے ہیں اور پیمرا کارروائی ان کے ساتھ شامل ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلوں پر من وعن عمل کیا جائے،۔ ٹی وی چینلز کی ریٹنگ کے حوالے سے بھی کمیٹی نوٹس لے اور ذمہ داروں کے خلاف کارروائی ہونی چاہئے۔ سیکریٹری اطلاعات و نشریات محمد اعظم نے کہا کہ ٹی وی چینلز کی ریٹنگ کیلئے نیا مشینی نظام لایا جا رہا ہے جس سے انسانی مداخلت کا عمل مکمل طور پر ختم ہوجائے گا۔ تمام فریقین سے مشاورت جاری ہے۔ پیپلز پارٹی کے عمران ظفر لغاری نے کہا کہ ٹی وی چینلز پر سیاست دانوں کی پگڑیاں اچھالی جا رہی ہیں میڈیا کی آزادی صرف سیاستدانوں تک محدود ہے، طلال چوہدری نے کہا کہ فوج اور عدلیہ کا احترام سب پر لازم ہے لیکن پارلیمنٹ اور پالیمنٹیرینز کو ذلیل نہ کیا جائے۔ اگر پیمرا ٹھوس اقدامات نہیں کرتا تو پھر قائمہ کمیٹی اس معاملے پر ٹی وی چینلز مالکان اور اینکرز کو کمیٹی کے اجلاس میں طلب کرے جس پر چیئر مین پیر اسلم بودلہ نے پیمرا کو احکامات جاری کئے کہ وہ ایسے پروگراموں کو روکنے کیلئے اقدامات کرے۔

Tags: