نیشنل ہائی وے اتھارٹی نے12 ہزار فی گھنٹہ پر قانونی ماہر رکھ لیا

October 7, 2015 3:29 pm0 commentsViews: 20

موٹر وے منصوبے کیلئے تعینات وکیل نے ایک ماہ میں495 گھنٹے کام کا60 لاکھ معاوضہ طلب کر لیا
تعمیراتی منصوبے من پسند کمپنیوں کو دیئے جانے کا عمل جاری، عارضی بنیادوں پر تعینات افسران کو غیر معمولی مراعات
اسلام آباد( نیوز ڈیسک) نیشنل ہائی وے اتھارٹی انتظامیہ کا قانونی معاونت کیلئے12ہزار روپے فی گھنٹہ پر لیگل کنسلٹنٹ رکھنے کا انکشاف، کراچی ، حیدر آباد موٹر وے منصوبے کیلئے تعینات بیرسٹر عطاء الرحمن نے ایک ماہ میں495 گھنٹے کام کرنے پر60 لاکھ روپے کا بل شعبہ فنانس کو ادائیگی کیلئے دید یا ہے۔ اتھارٹی میں قوانین کے برعکس جہاں تعمیراتی منصوبے من پسند کمپنیوں کو دئیے جانے کا عمل جاری ہے وہیں عارضی بنیاد پر بھرتی کئے گئے افسران اور ماہرین کو حیران کن حد تک غیر معمولی تنخواہ اور پیکج دیکر تعینات کیا گیا ہے ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ کراچی، حیدر آباد موٹر وے کی تعمیراتی منصوبے میں قانونی پیچیدگیوں کو حل کرنے کیلئے کچھ عرصہ قبل ملک کے ایک سینئر قانون دان کی سالانہ36 لاکھ روپے پر خدمات حاصل کی گئیں جن کی موجودگی میں ایک اہم حکومتی شخصیت کے ایماء پر بیرسٹر عطاء الرحمن کی خدمات بھی12 ہزار روپے فی گھنٹہ کے حساب سے حاصل کر لی گئیں جنہوں نے گزشتہ دنوں این ایچ اے کے شعبہ فنانس میں495 گھنٹے کام کرنے کا کلیم کرتے ہوئے 60 لاکھ روپے کا بل بنا کر وصولی کیلئے جمع کرایا ہے جس پر مزید کارروائی عمل میں جاری ہے۔ ذرائع کے مطابق بیرسٹر عطا ء الرحمن کراچی سے اسلام آباد بذیعہ جہاز پہنچے جہاں انہوں نے این ایچ اے ہیڈ کوارٹر پہنچنے کیلئے ریڈیو کیب بک کرائی جسے دن بھرآفس کے باہر کھڑا رکھا بعد ازاں کار کے9 ہزار روپے کرائے کا بل بھی وصولی کیلئے شعبہ فنانس میں جمع کرا دیا۔

Tags: