ملیر میں الاٹ کر دہ9 ہزار ایکڑ اراضی کی لیز منسوخ

October 7, 2015 3:30 pm0 commentsViews: 59

محکمہ ریونیو ملیر نے زمین کے سرکاری ریکارڈ پر منسوخی کے نوٹ آویزاں کر دیئے
بااثر افراد نے سرکاری اراضی پر زبردستی قبضہ کرکے گارڈ بٹھا رکھے تھے، قبضہ مافیا ملک سے فرار
کراچی( کرائم ڈیسک) سندھ حکومت کی جانب سے 2001ء سے 2014ء تک ملیر میں الاٹ کر دہ9 ہزار ایکڑ سے زائد زمین کی الاٹمنٹ منسوخ کر نے کے احکامات کے بعد محکمہ ریونیو ملیر نے زمین کے سرکاری ریکارڈ پر منسوخی کے نوٹ آویزاں کر دئیے۔ منسوخ ہونے والی زمین تیس سالہ لیز والی زمینیں اور سیکشن 17 کے تحت شفٹ کر دہ زمینیں بھی شامل ہیں۔ معلومات کے مطابق وزیر اعلیٰ کے احکامات پر سیکریٹری لینڈ یوٹیلائزیشن کی جانب سے جاری کر دہ لیٹر کے بعد ملیر ضلع میں بن قاسم، ابراہیم حیدری، دیہہ بٹی آمری، اسکیم 33 ، سب ڈویژن ایئر پورٹ، سب ڈویژن ملیر، دیہہ جوریجی اور دیگر علاقوں میں منسوخ کر دہ 9 ہزار ایکڑ سے زائد زمین کے سرکاری ریکارڈ پر ڈپٹی کمشنر ملیر اور متعلقہ اسسٹنٹ کمشنر و مختار کار نے منسوخی کے نوٹ آویزاں کر دئیے ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ایپکس کمیٹی کی ہدایت کے بعد ان تمام زمینوں کی پرانی اور نئی الاٹمنٹ منسوخ کر دی گئی ہے۔ زمینوں کے سارے معاملات سنبھالنے والی اور سیکشن 17 کے تحت زمینوں کے کاغذات تیار کروانے والی تمام شخصیات ملک سے فرار ہو چکی ہے۔

Tags: