300علماء و ذاکرین کے سندھ میں داخلے پر پابندی

October 8, 2015 1:05 pm0 commentsViews: 121

مجالس کے دوران نظم و ضبط کو یقینی بنایاجائے،علماء کو دھمکیاں دینے والے عناصر کیخلاف سخت کارروائی کی جائیگی، گورنر سندھ محرم الحرام میں
سندھ حکومت نے محرم الحرام کے دوران اشتعال انگیزی روکنے کے لیے جلد علماء اورذاکرین پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا ہے ان کے ناموں کی فہرست آئندہ چند روز میں جاری کردی جائے گی
حساس اداروں نے شہر میں محرم الحرام کے حوالے سے ہونے والی تمام مجالس اور ماتمی جلوسوں کی کڑی نگرانی کا فیصلہ کیا ہے، اشتعال انگیز تقاریر کرنے والوں کو گرفتار کرلیاجائے گا، ذرائع وزارت داخلہ
ضابطہ اخلاق پرعملدرآمد یقینی بنایاجائے، گورنر سندھ، صرف محرم میں ہی نہیں پورے سال خطبات کی نگرانی اور مذہبی منافرت پھیلانے والوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے، علماء کرام کی گورنر عشرت العباد سے بات چیت
کراچی( کرائم ڈیسک) سندھ حکومت نے محرم الحرام میں اشتعال انگیزی کرنے اور بین المسالک ہم آہنگی برقرار رکھنے کیلئے300 سے زائد علماء و ذاکرین کے سندھ میں داخلے پر پابندی لگا دی ہے۔ جن علماء پر پابندی لگائی گئی ہے ان کے ناموں کی فہرست کی تیاری حتمی مراحل میں ہے۔ جو آئندہ چند روز میں جاری کر دی جائے گی۔ دوسری طرف حساس اداروں نے کراچی میں محرم الحرام کے دوران ماتمی جلوسوں، کی کڑی نگرانی کا فیصلہ کیا جو بھی خطیب یا عالم اشتعال انگیزی میں ملوث پایا گیا اس کو گرفتار کرکے دہشت گردی ایکٹ کے تحت مقدمات درج کئے جائیں گے۔ با خبر ذرائع کا کہنا ہے کہ ہر سال محرم الحرام کے دوران دیگر صوبوں اور سندھ کے مختلف اضلاع سے تعلق رکھنے والے علماء ذاکرین کے داخلے پر ایم پی او کے تحت بین الصوبائی اور بین الاضلاعی پابندی عائد کی جاتی ہے۔ تاہم اس بار صوبائی حکومت ہی نہیں، بلکہ وفاقی وزرات داخلہ کے علاوہ قانون نافذ کرنے والے حساس ادارے بھی اس معاملے پر خصوصی توجہ دے رہے ہیں۔ اس کا سبب کراچی میں جاری ٹارگٹڈ آپریشن ہے تا کہ محرم الحرام کے دوران تمام مسالک کے درمیان مثالی ہم آہنگی رہے کسی کو اشتعال انگیزی پھیلانے کا کسی صورت موقع نہ مل سکے۔ ذرائع نے بتایا کہ محرم الحرام کے حوالے سے تمام مجالس، ماتمی جلوسوں وغیرہ کی کڑی نگرانی کے ساتھ اشتعال انگیز تقاریر کرنے والے علماء اور ذاکرین پر پابندی عائد کی جائے گی۔ ذرائع نے بتایا کہ صوبائی محکمہ داخلہ نے آئی جی سندھ پولیس، تمام ڈویژنل کمشنرز اور ڈپٹی کمشنرز کو لیٹر ارسال کر دیا ہے۔

کراچی(سٹی رپورٹر)گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العبادخان نے کہا ہے کہ محرم الحرام میں علما ء کرام اتحاد بین المسلمین اور بھائی چار گی کی فضاء قائم کرنے میں مثالی کردار ادا کررہے ہیں جسے حکومت اور عوام قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں ۔انہوں نے علماء کرام اوراساتذہ کو دھمکی دینے کا نوٹس لیتے ہوئے علماء کرام سے کہا کہ تمام صورتحال سے قانون نافذ کرنے والے اداروں کو آگاہ کیا جائے تاکہ اس پر موثر اقدامات کئے جائیں یہ بہت سنجیدہ مسئلہ ہے اس میں ملوث عناصر کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گورنر ہائوس میں محرام الحرام کے جائزہ اجلاس میں شرکت کرنے والے جعفریہ الائنس کے رہنمائوں علامہ عباس کمیلی ، علامہ عون نقوی ، علامہ حسین سعودی ، علامہ فرقان عابدی ، علامہ نثار قلندری ، علامہ مجاور ، علامہ وقار نقوی ، شبر رضا ، سلیمان مجتبیٰ ، صغیر عابدی سمیت دیگر شرکاء اوراہلسنت والجماعت کے رہنمائوں حاجی محمد حنیف طیب ، مفتی منیب الرحمن ، شاہد غوری ، مولانا کوکب نورانی اوکاڑوی،مولانا یعقوب عطاری، سینیٹر مولانا تنویر الحق تھانوی ، مفتی محمد نعیم ، مولانا راحت ، قاری شیر افضل سمیت دیگر سے علیحدہ علیحدہ اجلاس سے کیا ۔ اس موقع پر کمشنر کراچی ،سیکریٹری داخلہ، رینجرز اور پولیس کے نمائندوں سمیت دیگر اعلیٰ حکام بھی موجود تھے۔ اجلاس میں علما ء کرام نے گورنر سندھ کو سیکیورٹی ، صحت صفائی ، لائوڈ اسپیکر کی اجازت اور مجالس کے مقامات پر خصوصی انتظامات اور کراچی سمیت صوبہ سندھ کے مسائل سے تفصیلی آگاہ کیا ۔ علماء کرام نے بتایا کہ صرف محرم الحرام میں ہی نہیں بلکہ پورے سال تمام خطبات کی موثر نگرانی کی جائے مذہبی منافرت پھیلانے والے کسی بھی فرقے یا مسلک سے تعلق رکھنے والے فرد کے خلاف بلا تفریق و دبائو کارروائی عمل میں لائی جائے اور محرم الحرام کے ایام میں ذاکرین کو سیکیورٹی فراہم کی جائے ۔علما ء کرام نے بتایا کہ ہمیں آپریشن سے بہت ریلیف ملا ہے آپریشن کے اچھے نتائج سامنے آرہے ہیں ضرب عضب آپریشن کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں، گورنر سندھ نے کہا کہ علما کرام حساس مقامات پر ڈپٹی کمشنر ز اور پولیس افسران سے رابطہ کریں تاکہ کسی بھی مسئلے کی صورت میں اسے روکا جاسکے، علما کرام ضابطہ اخلاق پر عملدرآمد کے لئے لوگوں کو پابند کریں اور مجالس کے دوران نظم و ضبط کو یقینی بنائیں ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کرنے پر ادارے ایکشن لیں گے ۔

Tags: