رہائشی عمارتوں کا تجارتی مقاصد کیلئے استعمال کا انکشاف

October 8, 2015 2:08 pm0 commentsViews: 17

پولیس علاقوں میں متعلقہ افسران و عملے کی ملی بھگت سے زیادہ تر عمارتوں کو گودام کے طور پر استعمال کیاجارہاہے جو خلاف قانون ہے
گوداموں میں ایسی اشیاء رکھی گئی ہیں جو آگ لگنے کی صورت میں آس پاس عمارتوں کو تہس نہس کرسکتی ہیں
کراچی(سٹی رپورٹر)شہر کے پوش علاقوں میں تجارتی مقاصد کے لئے عمارتوں کو استعمال کر کے بلڈنگ رولز کی سنگین خلاف ورزی کی جارہی ہے،جس میں متعلقہ اداروں کے افسران اور عملے کی ملی بھگت شامل ہے،زرائع کے مطابق زیادہ تر بلڈنگز کو گودام کے طور پر استعمال کیا جارہا ہے،ان گوداموں میں ایسی اشیاء موجود ہیں جو آگ کی پکڑ سے رہائشی علاقوں کو تہس نہس کرسکتی ہیں ،دہلی مرکنٹائل عالمگیر مسجد کے عقب سید حیدر علی روڈ ودیگر علاقوں کے مکینوں نے بتایا کہ متعلقہ محکموں میں متعدد بار شکایت کے باوجود کوئی شنوائی نہیں ہوئی،انہوں نے کہا کہ تجارتی مقاصد کے لئیے جو گودام قائم کئیے گئے ہیں ان میں آتشگیر مواد رکھا جاتا ہے ،جس سے انسانی جانوں اور رہائشی عمارتوں کو شدید خطرات ہیں،علاقہ مکینوں کے مطابق اس سلسلے میں وہ جب گوداموں کے مالکان یا متعلقہ حکام سے شکایت کرتے ہیں تو ان گوداموں میں کام کرنے والے ملازمین ،خواتین سمیت رہائشی مکینوں سے بدتمیزی کرتے ہیں،علاقہ مکینوں نے صوبائی وزیربلدیات سید ناصر حسین شاہ سے مسئلہ کو فورا حل کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ قانون کے مطابق رہائشی عمار ت تجارتی مقاصد کے لئیے استعمال نہیں کی جاسکتی،لہذا گوداموں کو بند کرانے کے احکامات جاری کئے ۔

Tags: